اعلیٰ تعلیمی کمیشن کی حال ہی میں قائم ہونے والی انوویشن اسٹیرنگ کمیٹی کا اجلاس
بند کریں
تازہ ترین ایڈ یشن کے لیے ابھی کلک کریں
جمعرات مارچ

مزید اہم خبریں

وقت اشاعت: 17/03/2016 - 22:09:04 وقت اشاعت: 17/03/2016 - 22:09:04 وقت اشاعت: 17/03/2016 - 22:09:04 وقت اشاعت: 17/03/2016 - 21:56:06 وقت اشاعت: 17/03/2016 - 21:56:06 وقت اشاعت: 17/03/2016 - 21:56:06 وقت اشاعت: 17/03/2016 - 21:41:29 وقت اشاعت: 17/03/2016 - 21:41:28 وقت اشاعت: 17/03/2016 - 21:38:09 وقت اشاعت: 17/03/2016 - 21:28:05 وقت اشاعت: 17/03/2016 - 21:28:04
پچھلی خبریں - مزید خبریں

اسلام آباد

اسلام آباد شہر میں شائع کردہ مزید خبریں

وقت اشاعت: 17/01/2017 - 11:10:36 وقت اشاعت: 17/01/2017 - 11:10:38 وقت اشاعت: 17/01/2017 - 11:10:39 وقت اشاعت: 17/01/2017 - 10:35:10 وقت اشاعت: 17/01/2017 - 11:10:41 وقت اشاعت: 17/01/2017 - 11:10:41 اسلام آباد کی مزید خبریں

اعلیٰ تعلیمی کمیشن کی حال ہی میں قائم ہونے والی انوویشن اسٹیرنگ کمیٹی کا اجلاس

اسلام آباد ۔ 17 مارچ (اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔17 مارچ۔2016ء) اعلیٰ تعلیمی کمیشن (ایچ ای سی)کی حال ہی میں قائم ہونے والی انوویشن اسٹیرنگ کمیٹی نے جامعات میں موجود آفسز آف ریسرچ ، انوویشن اینڈ کمرشلائزیشن (اورکس)کے ذریعے تعلیمی مراکز اور انڈسٹری کے مابین روابط کو مزید مستحکم کرنے والے ذرائع پر غور کرنے کیلئے کمیشن سیکرٹریٹ میں اپنا اجلاس منعقد کیا۔

یہ کمیٹی کا ایک ہی ہفتے میں ہونے والا دوسرا اجلاس تھا جس میں انڈسٹری اورمختلف جامعات کے مذکورہ آفسز کے نمائندگان نے شرکت کی۔ اجلاس میں جامعات میں اختراعی اور انٹرپرینیورشپ کی سرگرمیوں کو فروغ دینے پر زور دیا گیا جو بادی النظر میں ملک میں ملازمت کے مواقع بڑھانے میں اہم کردار ادا کر سکتی ہیں اور ملکی معیشت کی ترقی کا موجب بن سکتی ہیں۔

ایچ ای سی کے ایگزیکٹیو ڈائریکٹر ڈاکٹر ارشد علی نے شرکاء کو اورکس کیلئے اختراعی سرگرمیوں کے فروغ میں مددگار ماحول اور طریقہء عمل بنانے کی ضرورت کے بارے میں بتایا اور کہا کہ اس سلسلے میں مشترکہ رہنمائی سے قابل انٹرپرینیورز کی حوصلہ افزائی بہت ضروری ہے۔ انہوں نے بین الاقوامی انڈسٹری کا جائزہ لے کرپاکستان کے لئے لائحہ عمل بنانے کی ضرورت پر زور دیتے ہوئے کہا کہ اگرچہ گزشتہ سالوں میں کچھ اداروں اور افراد کی جانب سے کافی اچھی کارکردگی دکھائی گئی تاہم زیادہ سے زیادہ فیکلٹی ممبران اور اساتذہ ، محققین اور طلباء کی حوصلہ افزائی وقت کی اہم ضرورت ہے تاکہ وہ اختراعی اور انٹرپرینیورشپ سے متعلقہ اقدامات میں متحرک ہوں۔

انہوں نے تجویز دی کہ جامعات کی درجہ بندی کرتے وقت ان کوان کے نئے نظریات اور ایجادی خیالات کو تجارتی حضانت اور اقدام کے ساتھ جوڑنے کے عمل سے متعلقہ کردار اور اس کردار کے ملکی معیشت پرمثبت اثرات کی بنا پراضافی نمبر دےئے

اس خبر کی تفصیل پڑھنے کیلئے یہاں پر کلک کیجئے

17/03/2016 - 21:56:06 :وقت اشاعت