کاٹی کی جانب سے ٹی ڈیپ کو ختم کرنے کے مطالبے کی مذمت
بند کریں
تازہ ترین ایڈ یشن کے لیے ابھی کلک کریں
جمعرات مارچ

مزید قومی خبریں

وقت اشاعت: 17/03/2016 - 20:31:03 وقت اشاعت: 17/03/2016 - 20:31:03 وقت اشاعت: 17/03/2016 - 20:26:09 وقت اشاعت: 17/03/2016 - 20:26:09 وقت اشاعت: 17/03/2016 - 20:25:19 وقت اشاعت: 17/03/2016 - 20:25:19 وقت اشاعت: 17/03/2016 - 20:25:19 وقت اشاعت: 17/03/2016 - 20:19:57 وقت اشاعت: 17/03/2016 - 19:55:44 وقت اشاعت: 17/03/2016 - 19:55:43 وقت اشاعت: 17/03/2016 - 19:53:58
پچھلی خبریں - مزید خبریں

کراچی

کاٹی کی جانب سے ٹی ڈیپ کو ختم کرنے کے مطالبے کی مذمت

حالات کو نظر انداز کرکے برآمدات کی کمی کا ذمے دار ایک ادارے کو ٹھہرانا لاعلمی کا ثبوت ہے، مشترکہ بیان

کراچی(اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔17 مارچ۔2016ء) کورنگی ایسوسی ایشن آف ٹریڈ اینڈ انڈسٹری کے صدر زاہد سعید، سینئر نائب صدر سلیم الزماں، نائب صدر سید واجد حسین، ایگزیکٹیو کمیٹی کے ارکان اور قائمہ کمیٹیوں کے سربراہان نے اپنے مشترکہ بیان میں ٹریڈ ڈویلپمنٹ اتھارٹی پاکستان کے خاتمے کے مطالبے اور اس ادارے پر ہونے والی تنقید کو بلاجواز قرار دیتے ہوئے مسترد کردیا۔

انہوں نے کہا کہ ٹی ڈیپ کو بند کرنے کی باتیں کرنے والے اور ملکی برآمدات میں اضافے کے لیے اس کے کردار کو غیر فعال قرار دینے والوں کو ماضی کی ان حکومتوں میں اپنی کارکردگی کا بھی جائزہ لینا چاہیے جن ادوار میں انھیں معیشت کی بہتری کے لیے ذمے داریاں دی گئی تھیں، اور ان کے دور اقتدار میں ملکی معیشت کو سنگین بحرانوں کا سامنا کرنا پڑا تھا۔

کاٹی کے رہنماؤں کا کہنا تھا کہ برآمدات میں کمی سے انکار نہیں کیا جاسکتا لیکن اس کے لیے کسی ایک ادارے کو مورد الزام ٹھہرانے کو منصفانہ رویہ قرار نہیں دیا جاسکتا،انہوں نے کہا کہ جو لوگ اداروں کو مؤثر بنانے کے عمل میں کردار ادا کرنے کے اہل نہیں ہوتے وہی اداروں کو بند کرنے کی بات کرتے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ عالمی کساد بازای کے باعث دنیا بھر میں بڑی معیشتیں بھی برآمدات میں کمی جیسے مسئلے کا شکار ہیں، اور ملکی ایکسپورٹ میں کمی کی بنیادی وجہ TDAP کی خراب کارکردگی نہیں بلکہ ملک میں توانائی بحران اور عالمی مارکیٹ میں شدید مندی کا رجحان اس کا باعث ہے جس کے سبب انڈیا کی ایکسپورٹ میں 12 فیصدکمی ہوئی اور اس کے ساتھ ساتھ چائنا بھی اپنی ایکسپورٹ میں کمی کا

مکمل خبر پڑھنے کیلئے یہاں پر کلک کیجئے

17/03/2016 - 20:25:19 :وقت اشاعت

:متعلقہ عنوان