مالاکنڈ آپریشن کے وقت دہشت گردوں کیخلاف عدالتوں میں سماعت نہیں ہو سکتی تھی ، سپریم ..
بند کریں
تازہ ترین ایڈ یشن کے لیے ابھی کلک کریں
منگل مارچ

مزید اہم خبریں

وقت اشاعت: 15/03/2016 - 23:47:46 وقت اشاعت: 15/03/2016 - 23:46:42 وقت اشاعت: 15/03/2016 - 23:46:42 وقت اشاعت: 15/03/2016 - 22:46:40 وقت اشاعت: 15/03/2016 - 22:42:42 وقت اشاعت: 15/03/2016 - 22:42:42 وقت اشاعت: 15/03/2016 - 22:38:11 وقت اشاعت: 15/03/2016 - 22:36:16 وقت اشاعت: 15/03/2016 - 22:36:16 وقت اشاعت: 15/03/2016 - 22:34:02 وقت اشاعت: 15/03/2016 - 22:34:02
- مزید خبریں

اسلام آباد

مالاکنڈ آپریشن کے وقت دہشت گردوں کیخلاف عدالتوں میں سماعت نہیں ہو سکتی تھی ، سپریم کورٹ کے لاپتہ افراد کے حوالے سے از خود نوٹس پر اس کا نفاذ ہوا، اس میں فاٹا کی 7 ایجنسیاں اور 6بندوبستی علاقے شامل ہیں، سول پاور ریگولیشن 2011 کے تحت فاٹا میں کل 28 تفتیشی مراکز ، 258 افرا د زیر حراست ہیں ،تفتیشی مراکز میں کوئی خاتون زیر حراست نہیں

تفتیشی مراکز میں سہولیات کا فقدان ہیں،ہمارے پاس بجٹ نہیں کے وہاں قیدیوں کو سہولیات دے سکیں , سینیٹ کی فنکشنل کمیٹی برائے انسانی حقوق کو فاٹا امن و امان کے سیکر ٹری کی سول پاور ریگولیشن 2011 بارے بریفنگ

اسلام آباد (اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔15 مارچ۔2016ء) سینیٹ کی فنکشنل کمیٹی برائے انسانی حقوق کوسول پاور ریگولیشن 2011 کے حوالے سے بریفنگ دیتے ہوئے فاٹا امن و امان کے سیکر ٹری شکیل نادر خان نے کہا ہے کہ مالاکنڈ آپریشن کے وقت دہشت گردوں کیخلاف عدالتوں میں سماعت نہیں ہو سکتی تھی ، سپریم کورٹ کے لاپتہ افراد کے حوالے سے از خود نوٹس پر اس کا نفاذ ہوا، جس میں فاٹا کی 7 ایجنسیاں اور 6بندوبستی علاقے شامل ہیں، ریگولیشن کا مقصد گرفتار افراد کی باعزت واپسی تھا، سول پاور ریگولیشن 2011 کے تحت فاٹا میں کل 28 تفتیشی مراکز ہیں جن میں سے6 آپریشنل ہیں اوران میں 258 افرا د زیر حراست ہیں ،تفتیشی مراکز میں کوئی خاتون زیر حراست نہیں ، تفتیشی مراکز میں سہولیات کا فقدان ہیں،ہمارے پاس بجٹ نہیں کے وہاں قیدیوں کو سہولیات دے سکیں، بار بار لکھنے کے باوجو بجٹ نہیں دیا گیا ۔

کمیٹی کا اجلاس قائم مقام چیئر مین سینیٹر محسن خان لغاری کی زیر صدارت پارلیمنٹ ہاؤس میں منعقد ہو ا۔اجلاس میں سینیٹرز فرحت اﷲ بابر، نثار محمد ، ڈاکٹر جہانزیب جمال دینی، ستارہ ایاز ، ثمینہ عابد، مفتی ابرارکے علاوہ وزارت سیفران کے طارق حیات اور صوبہ خیبر پختونخوا کے سیکرٹری قانون شکیل نادر خان ،قومی کمیشن برائے انسانی حقو ق کے ممبرز فضیلہ عالیانی ، چوہدری شفیق ،پیمرا کے جنرل منیجرز ناصر ایوب، وکیل خان، پی ایف یو جے صدر افضل بٹ ، بول ٹی وی کے نذیر لغاری، فیصل عزیز خان، سبوخ سیدنے شرکت کی ۔

سول پاور ریگولیشن 2011 کے حوالے سے سینیٹر فرحت اﷲ بابر کے سوالات کے جواب میں یہ بھی آگاہ کیا گیا کہ کل 28 تفتیشی مراکز میں سے چھ اپریشنل ہیں اور258 افرا د زیر حراست ہیں پورے فاٹا کے لئے پارا چنار میں 150 قیدیوں کی ایک جیل ہے تفتیشی مراکز میں کوئی خاتون زیر حراست نہیں ۔ اور انکشاف ہوا ہے کہ تفتیشی مراکز کے لئے بار بار لکھنے کے باوجو بجٹ نہیں دیا گیا نواگئی ایف سی قلعے میں ایک مرکز تین چار کمروں پر اور دوسر امرکز لنڈی

مکمل خبر پڑھنے کیلئے یہاں پر کلک کیجئے

15/03/2016 - 22:42:42 :وقت اشاعت