مذہبی جماعتوں کا تحفظ نسواں ایکٹ کو فوری طور پر واپس لینے کا مطالبہ
بند کریں
تازہ ترین ایڈ یشن کے لیے ابھی کلک کریں
منگل مارچ

مزید اہم خبریں

وقت اشاعت: 15/03/2016 - 20:28:24 وقت اشاعت: 15/03/2016 - 20:28:24 وقت اشاعت: 15/03/2016 - 20:24:29 وقت اشاعت: 15/03/2016 - 20:22:43 وقت اشاعت: 15/03/2016 - 19:53:38 وقت اشاعت: 15/03/2016 - 19:49:54 وقت اشاعت: 15/03/2016 - 19:49:54 وقت اشاعت: 15/03/2016 - 19:45:54 وقت اشاعت: 15/03/2016 - 19:40:52 وقت اشاعت: 15/03/2016 - 19:10:55 وقت اشاعت: 15/03/2016 - 19:07:04
پچھلی خبریں - مزید خبریں

لاہور

مذہبی جماعتوں کا تحفظ نسواں ایکٹ کو فوری طور پر واپس لینے کا مطالبہ

لاہور(ا ردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین-انٹرنیشنل پریس ایجنسی۔15مارچ۔2016ء)مذہبی جماعتوں نے پنجاب میں حال ہی میں منظور کیے جانے والے تحفظ نسواں ایکٹ کو فوری طور پر واپس لینے اور اسلامی نظریاتی کونسل کے مشاورت سے نیا قانون لانے کا مطالبہ کیا ہے۔یہ مطالبہ لاہور میں جماعت اسلامی کے ہیڈکوارٹر منصورہ میں مختلف مذہبی جماعتوں کے رہنماو¿ں کے اجلاس کے بعد مشترکہ اعلامیے میں کیا گیا۔

اعلامیے میں مطالبہ کیا گیا ہے کہ تحفظ خواتین سے متعلق موجودہ قوانین پر سختی سے عمل کروایا جائے۔ حکومت 27 مارچ سے پہلے نئے قانون کو واپس لے ورنہ 1977 جیسی تحریک جنم لے سکتی ہے۔ علما سیکیولر اور لبرل نظریات کا مقابلہ مل کر کریں گے۔اعلامیے میں ممتاز قادری کی پھانسی کی بھی مذمت کی گئی اور مطالبہ کیا گیا کہ توہین مذہب کے جرم میں جیلوں میں بند مجرموں کے مقدمات کا فیصلہ قانون کے مطابق جلد کیا جائے۔

اعلامیے میں مزید کہا گیا کہ دہشت گردی کو مدارس سے جوڑنے کا عمل بند کیا جائے اور مدارس اور مساجد پر لگائی گئی نامناسب پابندیاں ختم کی جائیں۔اعلامیہ میں یہ بھی کہا گیا ہے کہ عافیہ صدیقی کی رہائی کے لیے حکومت اپنی ذمہ داریاں پوری کرے اور دہشت گردی کے خلاف قومی لائحہ عمل کی تمام شقوں پر عمل درآمد کیا جائے۔کانفرنس میں نیا قانون لانے کے لیے وفاقی اور صوبائی سطح پر مذاکراتی کمیٹیاں بنانے پر اتفاق کیا گیا۔

مشترکہ اعلامیہ میں کہاگیاہے کہ یہ اجلاس موجودہ حکمرانوں کے پے در پے خلاف شریعت اور آئین و نظریہ پاکستان کے منافی اقدامات و بیانات کی شدید مذمت کرتا ہے اور واضح کرتا ہے کہ پاکستان کی بنیاد کلمہ طیبہ پر رکھی گئی ہے پاکستان کا نام اسلامی جمہوریہ پاکستان ریاستی مذہب اسلام اور قرار داد مقاصد آئین کا لازمی حصہ ہے ۔اسی آئین کے مطابق حلف اٹھانے والوں کی طرف سے پاکستان کو لبرل بنانے کے اعلانا ت اور اسلامی دفعات کے منافی اقدامات ،آئین پاکستان سے بغاوت اور بانیان پاکستان و شہیدان وطن کی روحوں سے بے وفائی ہے ۔

اجلاس واشگاف الفاظ میں اعلان کرتا ہے کہ نظام مصطفی کے نفاذ ناموس رسالت کے تحفظ اور خاندانی نظام کی بقا کے مقاصد کے لئے تمام دینی جماعتیں اور طبقات متحد ہیں اور پاکستان کو اسلام کی منزل سے ہٹانے کے خواب دیکھنے والے مٹھی بھر سیکولر و بے دین طبقات کے ناپاک عزائم خاک میں ملا دئےے جائیں گے ۔اجلاس واضح کرتاہے کہ دینی معاملات پر ہم مشترکہ مو¿قف اور مشترکہ لائحہ عمل اختیار کرنے اور مشترکہ تحریک چلانے پر اتفاق کرتے ہیں۔

غیر شرعی ،غیر اسلامی ،غیر آئینی اقدامات و اعلانات کے خلاف ہم ایک ہیں اور سیکولر و لبرل نظریات کا مل کراور ڈٹ کر مقابلہ کریں گے ۔ دینی جماعتوں کامشترکہ اعلان ہے کہ 27مارچ تک پنجاب حکومت متنازعہ بل واپس لے اور وفاقی حکومت اسے یقینی بنائے۔2اپریل کو علماءو مشائخ کانفرنس اسلام آباد میں منعقد کی جائے گی اور آئندہ لائحہ عمل اور تحریک کااعلان کیاجائے گا۔

تحریک کے دوران اسلام آباد، لاہور ،کراچی اور ملک بھر میں تمام جماعتوں کی طرف سے مشترکہ عظیم الشان تحفظ ناموس رسالت ریلیوں اور بڑے بڑے جلسوں کا اہتمام کیاجائے گا۔ ایک سٹیرنگ کمیٹی تشکیل دی جارہی ہے جو خواتین کے حقوق کے تحفظ کے لیے قرآن و سنت کی روشنی میں نیا بل تشکیل دینے کے لیے علماءاور ماہرین سے مشاورت اور آئندہ کے تمام مراحل اور تحریک کالائحہ عمل طے کرے گا۔

اجلاس حکومت کو خبر دار کر تا ہے کہ اگر اس نے خلاف شریعت طرز عمل ترک نہ کیا اور تحفظ ناموس رسالت ،سودی معیشت کے خاتمہ ، خاندانی نظام کی بربادی کے مغربی ایجنڈے سے لاتعلقی اور مساجد و مدارس کے تحفظ کے سلسلہ میں اپنی ذمہ داریوںسے پہلوتہی کی تو ان شاءاللہ 1977ءکی تحریک نظام مصطفی ﷺ سے بڑی تحریک اٹھے گی اور جس کا مقابلہ کرنا کسی کے بس میں نہیں ہو گا۔

اجلاس واضح کرتا ہے کہ تحفظ ناموس رسالت اور عشق مصطفی ﷺ امت مسلمہ کا قیمتی سرمایہ ہے ۔اسلام دشمن قوتوں کوخوش کرنے کے لیے عاشق رسول غازی ممتاز حسین قادری شہید کو پھانسی دے کر حکومت نے پاکستان کے اسلامی تشخص قانون ناموس رسالت اور قانون عقیدہ ختم نبوت کو عملاً غیر مو¿ثر بنانے کی کوشش کی ہے اور اسلامیان پاکستان کے دلوں کو چھلنی کیا ہے لیکن تمام حکومتی اقدامات اور میڈیا کے مکمل بلیک آو¿ٹ کے باوجود عاشق رسول ملک ممتاز حسین قادری شہید کے جنازہ میں لاکھوں عاشقان مصطفی کی شرکت اور کراچی میں تاریخی ناموس رسالت ریلی اور ملک بھر میں ریلیوں اور جلسوں ،مظاہروں

اس خبر کی تفصیل پڑھنے کیلئے یہاں پر کلک کیجئے

15/03/2016 - 19:49:54 :وقت اشاعت

:متعلقہ عنوان