قومی اسمبلی میں افغان سرحد پر سیکیورٹی مستحکم کرنے اوراقلیتی تہوار پرتعطلیل ..
بند کریں
تازہ ترین ایڈ یشن کے لیے ابھی کلک کریں
منگل مارچ

مزید اہم خبریں

وقت اشاعت: 15/03/2016 - 15:13:45 وقت اشاعت: 15/03/2016 - 15:11:06 وقت اشاعت: 15/03/2016 - 15:11:06 وقت اشاعت: 15/03/2016 - 15:10:24 وقت اشاعت: 15/03/2016 - 15:10:24 وقت اشاعت: 15/03/2016 - 15:10:24 وقت اشاعت: 15/03/2016 - 15:09:25 وقت اشاعت: 15/03/2016 - 14:59:16 وقت اشاعت: 15/03/2016 - 14:59:15 وقت اشاعت: 15/03/2016 - 14:57:00 وقت اشاعت: 15/03/2016 - 14:57:00
پچھلی خبریں - مزید خبریں

اسلام آباد

اسلام آباد شہر میں شائع کردہ مزید خبریں

وقت اشاعت: 17/01/2017 - 11:10:36 وقت اشاعت: 17/01/2017 - 11:10:38 وقت اشاعت: 17/01/2017 - 11:10:39 وقت اشاعت: 17/01/2017 - 10:35:10 وقت اشاعت: 17/01/2017 - 11:10:41 وقت اشاعت: 17/01/2017 - 11:10:41 اسلام آباد کی مزید خبریں

قومی اسمبلی میں افغان سرحد پر سیکیورٹی مستحکم کرنے اوراقلیتی تہوار پرتعطلیل کی قرار داد متفقہ طور پر منظور

پاسپورٹ لازمی قراردیکر حکومت سرحد پر نقل و حرکت کے حوالے سے واضح پالیسی بنا رہی ہے ،مریم اورنگزیب

اسلام آباد (اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔15 مارچ۔2016ء) قومی اسمبلی میں پاک افغان سرحد پر سیکیورٹی کو مضبوط کرنے کی قرار داد متفقہ طور پر منظور کرلی گئی، پارلیمانی سیکرٹری برائے داخلہ مریم اورنگزیب نے کہا کہ حکومت سرحد پر نقل و حرکتکے حوالے سے واضح پالیسی بنا رہی ہے، جس کے ذریعے پاسپورٹ لازمی قرار دیا جائے گا، ایف آئی اے کے قواعد و ضوابط کو بھی لاگو کیا جائے گا، وزیراعظم کو سمری بھیج دی گئی ہے، افغانستان کی طرف سے آنے والوں کی مکمل نگرانی کی جا رہی ہے، قرار داد پر بحث میں حصہ لیتے ہوئے صاحبزادہ طارق اللہ ،شیریں مزاری، انجینئر عثمان ترکئی اور قرار داد کے محرک مراد سعید سمیت دیگر اراکین نے اظہار خیال کرتے ہوئے کہا کہ بارڈر پر سیکیورٹی معاملات سمیت سمگلنگ پر قابو پانا وفاقی حکومت کی ذمہ داری ہے، مغربی سرحد پر آزادانہ نقل و حمل کو روکا جائے تا کہ پاکستان میں امن بحال ہو، پاکستان میں رونما ہونے والے سانحات میں افغانستان سے آئے دہشت گرد ملوث ہوتے ہیں، ڈاکٹر رمیش کمار ونیکوانی کی اقلیتوں کے تہواروں کے حوالے سے تعطیل کے حوالے سے قرار داد سمیت عمرہ پالیسی کی تشکیل کے حوالے سے مزمل قریشی کی قرار داد بھی منظور کرلی گئی۔

منگل کو قومی اسمبلی کا اجلاس اسپیکر قومی اسمبلی سردار ایاز صادق کی زیر صدارت ہوا۔ اجلاس میں نجی ممبر ڈے کے موقع پر اراکین نے قرار دادیں پیش کیں۔ڈاکٹر رمیش کمار ونیکوانی اقلیتوں کیلئے ہولی، دیوالی اور ایسٹر پر عام تعطیلات کا اعلان کرنے کے حوالے سے قرار داد پیش کرتے ہوئے کہا کہ جیسے عید پر چھٹی ہوتی ہے اس طرح اقلیتوں کے تہواروں پر بھی عام تعطیل کا اعلان کیا جائے، تمام سیاسی جماعتوں میں اقلیتی ارکان موجود ہیں۔

وزیرمملکت برائے مذہبی امور پیر امین الحسنات نے کہا ہے کہ تعطیلات کا تعلق وزارت داخلہ سے ہے اور وہاں سے ہی عام تعطیلات کا سرکلر جاری ہوتا ہے۔ وزیر اطلاعات و نشریات سینیٹر پرویز رشید نے کہا کہ پاکستانی ایک دوسرے کے غم اور خوشیوں میں یکساں طور پر شامل ہیں، تمام مذاہب کو برابر کی نمائندگی موجود ہے، پاکستان میں تعطیلات کی تعداد دوسرے ممالک سے زیادہ ہے۔

وزیر مذہبی امور سردار محمد یوسف نے کہا کہ وزارت داخلہ کی ذمہ داری ہے۔ پارلیمانی سیکرٹری برائے داخلہ مریم اورنگزیب نے کہا کہ وزارت داخلہ اس قرار داد کی مخالفت نہیں کرے گی۔ وزیر مذہبی امور سردار محمد یوسف نے مزمل قریشی کی قرار داد پر کہا کہ عمرہ پالیسی تشکیل دینے کیلئے ڈرافٹ تیار کرلیا گیا ہے اور حکومت کوشش کر رہی ہے کہ حج و عمرہ پالیسی کے ذریعے عوام کو بہتر سہولیات فراہم کی جائیں۔

مراد سعید کی قرار داد پر پارلیمانی سیکرٹری برائے داخلہ مریم اورنگزیب نے کہا کہ بارڈر کراسنگ پر ایف آئی اے نے کارروائی کی ہے اور بارڈر کراسنگ پر ایف آئی اے کے قواعد و ضوابط لاگو ہوں گے، جیوٹیگنگ کے ذریعے پاسپورٹ لازمی قرار دیا جائے گا۔ مراد سعید نے قرار داد پیش کرتے ہوئے کہا کہ نیشنل انٹرنل سیکیورٹی پالیسی میں بارڈر کی سیکیورٹی کے حوالے سے اقدامات کا کہا گیا تھا، آرمی پبلک سکول اور دیگر حملوں میں سرحد کے اس پار سے دہشت گرد آئے اور کارروائی کی گئی اور یہاں دہشت گرد کارروائیاں کر کے افغانستان چلے جاتے ہیں۔

پارلیمانی سیکرٹری برائے داخلہ مریم اورنگزیب انٹرنل سیکیورٹی پالیسی پر افغان حکام سے بات کی گی اور ”نارا“سمیت ”نادرا“ کو بھی انٹرنل سیکیورٹی پالیسی میں ضم کیا گیا۔ مراد سعید نے کہا کہ مغربی سرحد سے لوگ بھی

اس خبر کی تفصیل پڑھنے کیلئے یہاں پر کلک کیجئے

15/03/2016 - 15:10:24 :وقت اشاعت

:متعلقہ عنوان