مہاجرین کی ترکی ملک بدری کا معاہدہ غیر قانونی ہے، ایمنسٹی انٹرنیشنل
بند کریں
تازہ ترین ایڈ یشن کے لیے ابھی کلک کریں
پیر مارچ

مزید بین الاقوامی خبریں

وقت اشاعت: 14/03/2016 - 19:55:30 وقت اشاعت: 14/03/2016 - 19:48:35 وقت اشاعت: 14/03/2016 - 19:09:47 وقت اشاعت: 14/03/2016 - 19:07:52 وقت اشاعت: 14/03/2016 - 19:06:05 وقت اشاعت: 14/03/2016 - 19:06:05 وقت اشاعت: 14/03/2016 - 19:06:05 وقت اشاعت: 14/03/2016 - 19:03:58 وقت اشاعت: 14/03/2016 - 19:03:58 وقت اشاعت: 14/03/2016 - 19:03:58 وقت اشاعت: 14/03/2016 - 19:02:36
پچھلی خبریں - مزید خبریں

مہاجرین کی ترکی ملک بدری کا معاہدہ غیر قانونی ہے، ایمنسٹی انٹرنیشنل

یورپی کونسل کے آئندہ اجلاس میں معاملہ اٹھائیں گے،سیکرٹری جنرل شلیل شیٹی

لندن(اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔14 مارچ۔2016ء)انسانی حقوق کے لیے کام کرنے والے بین الاقوامی ادارے ایمنسٹی انٹرنیشنل نے کہاہے کہ پناہ گزینوں کی ملک بدری کے حوالے سے یورپی یونین اور ترکی کے مابین مجوزہ معاہدہ اخلاقی اور قانونی طور پر غلط ہے۔ایمنسٹی انٹرنیشنل کے سکریٹری جنرل شلیل شیَٹی نے برطانوی خبررساں ادارے کوبتایاکہ تارکین وطن کے بارے میں یورپی یونین اور ترکی کے مابین طے پانے والے عبوری معاہدہ ناقص غیر اخلاقی اور غیر قانونی قرار دیا ہے۔

انہوں نے بتایاکہ اس مجوزہ معاہدے کے مطابق غیر قانونی طور پر ترکی سے یورپ پہنچنے والے تارکین وطن کو یورپ سے ملک بدر کر کے واپس ترکی بھیج دیا جائے گا۔ اس کے بدلے میں یونین، انقرہ کو مزید مالی امداد فراہم کرنے کے علاوہ ترک شہریوں کے لیے ویزے کی شرائط میں نرمی جیسی سہولیات فراہم کر سکتی ہے۔یورپی یونین اور ترکی کے درمیان اس ہفتے ایک اور

اس خبر کی تفصیل پڑھنے کیلئے یہاں پر کلک کیجئے

14/03/2016 - 19:06:05 :وقت اشاعت

:متعلقہ عنوان