القاعدہ کا مغرب نواز شامی باغیوں کے فوجی اڈوں پر قبضہ
بند کریں
تازہ ترین ایڈ یشن کے لیے ابھی کلک کریں
پیر مارچ

مزید بین الاقوامی خبریں

وقت اشاعت: 14/03/2016 - 19:06:05 وقت اشاعت: 14/03/2016 - 19:06:05 وقت اشاعت: 14/03/2016 - 19:06:05 وقت اشاعت: 14/03/2016 - 19:03:58 وقت اشاعت: 14/03/2016 - 19:03:58 وقت اشاعت: 14/03/2016 - 19:03:58 وقت اشاعت: 14/03/2016 - 19:02:36 وقت اشاعت: 14/03/2016 - 19:00:39 وقت اشاعت: 14/03/2016 - 18:43:37 وقت اشاعت: 14/03/2016 - 18:39:49 وقت اشاعت: 14/03/2016 - 17:42:58
پچھلی خبریں - مزید خبریں

القاعدہ کا مغرب نواز شامی باغیوں کے فوجی اڈوں پر قبضہ

القاعدہ کی ذیلی شاخ النصرہ فرنٹ نے شامی باغیوں کی تیرہویں ڈویژن کے درجنوں ارکان کو گرفتار بھی کر لیا ،سیئرین آبزرویٹری

لندن/دمشق(اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔14 مارچ۔2016ء)شام میں القاعدہ سے منسلک النصرہ فرنٹ نے اچانک پیش قدمی کے دوران مغرب کے حمایت یافتہ باغیوں کی متعدد فوجی چوکیوں پر قبضہ کرتے ہوئے ان سے ہتھیار بھی چھین لیے ۔ شام کے شمال میں یہ لڑائی گزشتہ رات سے جاری تھی۔میڈیارپورٹس کے مطابق شام میں جنگی حالات پر نظر رکھنے والی تنظیم سیریئن آبزرویٹری فار ہیومن رائٹس کا تصدیق کرتے ہوئے کہنا تھا کہ النصرہ فرنٹ نے مغرب کے حمایت یافتہ باغیوں کی متعدد فوجی پوزیشنوں پر قبضہ کرتے ہوئے باغیوں کا اسلحہ بھی اپنی تحویل میں لے لیا ہے۔

سیریئن آبزرویٹری فار ہیومن رائٹس کے سربراہ رامی عبدالرحمان کا کہنا تھا کہ النصرہ فرنٹ نے باغیوں کی تیرہویں ڈویژن کے درجنوں ارکان کو گرفتار بھی کر لیا ہے۔ شامی باغیوں کے اس گروپ کی حمایت مغربی دنیا بھی جاری رکھے ہوئے ہے اور اب ان باغیوں کے امریکی ہتھیار بھی النصرہ فرنٹ کے قبضے میں چلے گئے ہیں۔بتایا گیا ہے کہ قبضے میں لیے گئے اسلحے میں امریکی ٹینک شکن میزائل بھی شامل ہیں۔

شامی باغیوں کی یہ تیرہویں ڈویڑن مشہور اسد مخالف کمانڈر احمد السعود کی زیر نگرانی کام کرتی ہے اور یہ گروپ مغربی ممالک کی حمایت یافتہ فری سیریئن آرمی (FSA) کا حصہ ہے۔فری سیریئن آرمی کی طرف سے اس کے ٹوئٹر اکاؤنٹ پر صرف یہ کہا گیا ہے کہ النصرہ فرنٹ نے اس کی چوکیوں پر حملہ کرتے ہوئے ہتھیار اپنے قبضے میں لے لیے ہیں۔دوسری جانب النصرہ فرنٹ نے کہا ہے کہ پہلے ان باغیوں نے صوبہ ادلب میں فرنٹ کی چوکیوں پر اچانک حملہ کرتے ہوئے اس کے کئی ارکان کو اغوا کر لیا تھا۔

ان گروپوں کے مابین لڑائی کے یہ واقعات ایک ایسے وقت پر رونما ہو رہے ہیں، جب گزشتہ دو ہفتوں سے شام میں فائربندی معاہدہ نافذالعمل ہے اور کل پیر چودہ مارچ سے اسد حکومت کے نمائندوں اور شامی باغیوں کے مابین جنیوا میں امن مذاکرات بھی شروع ہونے والے ہیں۔جنگ بندی معاہدے میں حکومتی فورسز اور مغرب کے حمایت یافتہ باغیوں کے گروہ شامل ہیں لیکن اس معاہدے کا اطلاق النصرہ فرنٹ اور داعش جیسی عسکریت پسند تنظیموں پر نہیں ہوتا۔

شام میں النصرہ فرنٹ کئی مرتبہ دیگر باغی گروپوں کے ساتھ مل کر کام کرتی رہی ہے لیکن جب اس گروپ کے اپنے مفادات اور مختلف علاقوں پر اس کے قبضے کے تسلسل کی بات ہوتی ہے، تو القاعدہ کا حامی یہ شدت پسند گروپ مغربی ملکوں کے حمایت یافتہ مسلح گروہوں کے خلاف کارروائیوں سے بھی گریز نہیں کرتا۔

14/03/2016 - 19:03:58 :وقت اشاعت

:متعلقہ عنوان