چاہے کتنی باڑیں لگا دو، سرحدیں بند کر دو، ہم آ کر رہیں گے،شامی مہاجرین
بند کریں
تازہ ترین ایڈ یشن کے لیے ابھی کلک کریں
اتوار مارچ

مزید بین الاقوامی خبریں

وقت اشاعت: 13/03/2016 - 15:09:26 وقت اشاعت: 13/03/2016 - 14:45:07 وقت اشاعت: 13/03/2016 - 14:44:21 وقت اشاعت: 13/03/2016 - 14:44:21 وقت اشاعت: 13/03/2016 - 14:44:21 وقت اشاعت: 13/03/2016 - 14:43:26 وقت اشاعت: 13/03/2016 - 14:43:26 وقت اشاعت: 13/03/2016 - 14:43:25 وقت اشاعت: 13/03/2016 - 14:11:44 وقت اشاعت: 13/03/2016 - 14:11:43 وقت اشاعت: 13/03/2016 - 14:11:43
پچھلی خبریں - مزید خبریں

چاہے کتنی باڑیں لگا دو، سرحدیں بند کر دو، ہم آ کر رہیں گے،شامی مہاجرین

گزشتہ برس یورپ پہنچنا آسان تھا جب لوگ ایک دوسرے کا پیچھا کرتے چلتے تھے تاہم اب سب کچھ خود کرنا پڑتا ہے،گفتگو

برسلز(اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔13 مارچ۔2016ء)متعدد یورپی ملکوں کی جانب سے سرحدوں کی بندش، بحیرہ ایجیئن میں نیٹو کے بحری جہازوں کے گشت اور ترک حکام کی سخت تر کارروائیوں کے باوجود چند شامی مہاجرین نے اب بھی یورپ پہنچنے کے لیے عزم کاظہارکرتے ہوئے کہاہے کہ ان کا سفر سرحدیں بند کرنے سے رکنے والا نہیں بلکہ ہم آگے بڑھ کرر ہیں گے،جرمن خبررساں ادارے سے بات چیت کرتے ہوئے یونیورسٹی کے طالب علم تیئس سالہ محمد سوادی نے کہاکہ اس کا اپنے دو ساتھیوں کے ہمراہ سفر شامی دارالحکومت دمشق سے شروع ہواانہیں گھر چھوڑنے سے قبل ہی معلوم تھا کہ یونان سے آگے بڑھنا مشکل ثابت ہو رہا ہے اور متعدد ممالک کی سرحدیں بند ہیں تاہم وہ یورپ پہنچنے کے لیے پر عزم نظر آتے ہیں۔

سوادی کا کہنا تھاکہ ہم نے ایک عہد کیا تھا، ہم یورپ پہنچ کر رہیں گے اور ایک ساتھ رہیں گے۔انہوں

اس خبر کی تفصیل پڑھنے کیلئے یہاں پر کلک کیجئے

13/03/2016 - 14:43:26 :وقت اشاعت

:متعلقہ عنوان