تعلقات کی بحالی سے قبل امریکا معافی مانگے: ایرانی صدر
بند کریں
تازہ ترین ایڈ یشن کے لیے ابھی کلک کریں
جمعہ نومبر

مزید بین الاقوامی خبریں

وقت اشاعت: 13/11/2015 - 12:21:35 وقت اشاعت: 13/11/2015 - 12:21:35 وقت اشاعت: 13/11/2015 - 11:48:00 وقت اشاعت: 13/11/2015 - 11:48:00 وقت اشاعت: 13/11/2015 - 11:41:02 وقت اشاعت: 13/11/2015 - 11:41:02 وقت اشاعت: 13/11/2015 - 11:38:26 وقت اشاعت: 13/11/2015 - 11:38:26 وقت اشاعت: 13/11/2015 - 11:38:26 وقت اشاعت: 13/11/2015 - 11:37:30 وقت اشاعت: 13/11/2015 - 11:35:08
پچھلی خبریں - مزید خبریں

تعلقات کی بحالی سے قبل امریکا معافی مانگے: ایرانی صدر

تہرا ن (اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔13 نومبر۔2015ء)ایران کے صدر حسن روحانی نے کہا ہے کہ تہران کے جوہری پروگرام پر سمجھوتے کے بعد امریکا کے ساتھ تعلقات کے قیام کی راہ ہموار ہوئی ہے۔ سمجھوتے کے نتیجے میں دونوں ملکوں کو ایک دوسرے کے ہاں سفارت خانے کھولنے کا موقع ملا ہے مگر تہران میں سفارت خانہ کھولنے سے قبل امریکا کو ایران سے معافی مانگنا ہو گی۔

خیال رہے کہ ایران اور امریکا کے درمیان سفارتی تعلقات سنہ 1979ء کے ولایت فقیہ کے انقلاب کے بعد اس وقت ختم ہو گئے تھے جب ایرانی طلباء نے تہران میں امریکی سفارت خانے کا گھیراؤ کرنے کے بعد ایک سال سے زائد عرصے تک سفارتی عملے کو یرغمال بنا رکھا تھا۔ اس کے بعد دونوں ملکوں نے ایک دوسرے سے سفارتی تعلقات ختم کر دیے تھے۔رواں سال جولائی میں چھ بڑی عالمی طاقتوں اور تہران کے درمیان طے پائے سمجھوتے کے بعد ایران نے جوہری سرگرمیاں محدود کرنے اور عالمی طاقتوں نے اس پرعاید پابندیوں میں نرمی کرنے سے اتفاق کیا تھا۔

درایں اثناء امریکی صدر باراک اوباما ے بدھ کو اپنے ایک بیان میں کہا تھا کہ وہ ایران پر عاید پابندیوں کو برقرار رکھنے کے لیے تہران پر عاید ہنگامی حالت میں مزید ایک سال کی توسیع کر سکتے ہیں۔ انقلاب ایران کے بعد آٹھ بار ایران پرپابندیوں کے لیے ایمرجنسی میں توسیع کی جا چکی ہے۔

اگر اوباما دوبارہ توسیع کرتے

اس خبر کی تفصیل پڑھنے کیلئے یہاں پر کلک کیجئے

13/11/2015 - 11:41:02 :وقت اشاعت