افریقی ممالک اپنے مہاجر شہریوں کو قبول کریں، یورپی یونین
بند کریں
تازہ ترین ایڈ یشن کے لیے ابھی کلک کریں
جمعرات نومبر

مزید بین الاقوامی خبریں

وقت اشاعت: 12/11/2015 - 12:55:15 وقت اشاعت: 12/11/2015 - 12:46:52 وقت اشاعت: 12/11/2015 - 12:45:58 وقت اشاعت: 12/11/2015 - 12:45:58 وقت اشاعت: 12/11/2015 - 12:39:52 وقت اشاعت: 12/11/2015 - 12:39:52 وقت اشاعت: 12/11/2015 - 12:38:56 وقت اشاعت: 12/11/2015 - 12:38:56 وقت اشاعت: 12/11/2015 - 12:37:24 وقت اشاعت: 12/11/2015 - 12:37:24 وقت اشاعت: 12/11/2015 - 12:23:59
پچھلی خبریں - مزید خبریں

افریقی ممالک اپنے مہاجر شہریوں کو قبول کریں، یورپی یونین

برلن(اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔12 نومبر۔2015ء)یورپی یونین نے مہاجرین کے بحران پر قابو پانے کے لیے ایک منصوبہ پیش کرتے ہوئے افریقی اقوام سے مطالبہ کیا ہے کہ آبائی ممالک ایسے مہاجرین کو قبول کریں، جنہیں یورپی یونین سیاسی پناہ نہ دے۔یورپی یونین کے منصوبے کے مطابق ایسے مہاجرین جن کی سیاسی پناہ کی درخواستیں یورپ میں مسترد ہو جائیں، انہیں یورپی دستاویزات جاری کی جائیں گے، تاکہ وہ اپنے ممالک واپس جا سکیں۔

یورپی یونین نے افریقی ممالک سے کہا ہے کہ ایسے افراد کو اپنے گھر واپس لوٹنے کی اجازت دینا از حد ضروری ہے۔افریقی یونین سے وابستہ ایک اعلیٰ عہدیدار نے اس منصوبے کو ’انہونی‘ قرار دیا ہے جب کہ مہاجرین کے امور سے متعلق افراد کا کہنا ہے کہ اس تجویز سے واضح لگتا ہے کہ یہ ’جلدی‘ میں تیار کردہ منصوبہ ہے۔یورپی یونین کی جانب سے یہ منصوبہ مالٹا میں افریقی یورپی سربراہی کانفرنس کے موقع پر پیش کیا گیا۔

یہ کانفرنس مہاجرین کے بحران پر قابو پانے کے لیے ان کے ممالک سے مذاکرات کے لیے منعقد کی جا رہی ہے۔اس کانفرنس کے مالٹا میں انعقاد کی ایک وجہ یہ بھی ہے کہ بحیرہء روم میں واقع یہ جزیرہ ریاست بھی مخدوش کشتیوں کے ذریعے سمندر پار کر کے یورپ میں داخلے کی کوشش کرنے والے مہاجرین کو ریسکیو کرنے میں پیش پیش رہی ہے۔بین الاقوامی تنظیم برائے مہاجرین آئی او ایم کے مطابق رواں برس قریب آٹھ لاکھ افراد سمندر کے راستے یورپ تک پہنچنے میں کامیاب ہوئے۔

یورپی یونین کا کہنا ہے کہ 2017 تک یہ تعداد تین ملین سے

مکمل خبر پڑھنے کیلئے یہاں پر کلک کیجئے

12/11/2015 - 12:39:52 :وقت اشاعت