لیز پر دی گئی زمین کی واپسی بارے سپریم کورٹ کے احکامات نظر انداز
بند کریں
تازہ ترین ایڈ یشن کے لیے ابھی کلک کریں
بدھ نومبر

مزید اہم خبریں

وقت اشاعت: 11/11/2015 - 22:33:53 وقت اشاعت: 11/11/2015 - 22:33:53 وقت اشاعت: 11/11/2015 - 22:32:37 وقت اشاعت: 11/11/2015 - 22:32:37 وقت اشاعت: 11/11/2015 - 22:32:37 وقت اشاعت: 11/11/2015 - 22:22:13 وقت اشاعت: 11/11/2015 - 22:18:01 وقت اشاعت: 11/11/2015 - 22:18:01 وقت اشاعت: 11/11/2015 - 22:16:53 وقت اشاعت: 11/11/2015 - 22:16:53 وقت اشاعت: 11/11/2015 - 22:16:53
پچھلی خبریں - مزید خبریں

اسلام آباد

لیز پر دی گئی زمین کی واپسی بارے سپریم کورٹ کے احکامات نظر انداز

پوش سیکٹرز کے گھروں میں سرکاری و غیر سرکاری دفاتر ختم کرانے پر حکام نے چپ سادھ لی

اسلام آباد(اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔11 نومبر۔2015ء) سی ڈی اے حکام نے لیز پر دی گئی زمین واپس لینے سے متعلق سپریم کورٹ کے احکامات کو نظر انداز کردیا ، ملک کی اعلیٰ ترین عدلیہ کے احکامات کو نظروں سے اوجھل کرنے کیلئے کھوکھوں کیخلاف ہنگامی بنیادوں پر ایکشن لیا گیا ۔ وفاقی دارالحکومت کے پوش سیکٹروں کے جہاز نما گھروں میں قائم سرکاری و غیر سرکاری دفاتر ختم کرنے کیلئے سی ڈی اے حکام نے مکمل چپ سادھ لی ۔

تفصیلات کے مطابق سپریم کورٹ کے دو رکنی بینچ جو کہ جسٹس امیر ہانی مسلم اور جسٹس دوست محمد پر مشتمل تھا نے ایک کیس برج فیکٹر بنام سی ڈی اے سپیشل مجسٹریٹ میں 15ستمبر 2015ء کو یہ فیصلہ سنایا تھا کہ سی ڈی اے کی اربوں روپے مالیت کی قیمتی زمین جو کوڑیوں کے بھاؤ لیز پر دی گئی ہے ان کے غیر قانونی استعمال کو نہ صرف روکا جائے بلکہ غیر قانونی استعمال کرنے والوں سے یہ زمین واپس لیکر قانون کے مطابق کارروائی کی جائے جبکہ اس فیصلے پر عملدرآمد کی بجائے سی ڈی اے نے دو ماہ بعد غیر قانونی کچی آبادیوں کی آباد کاری میں ملوث سی ڈی اے کے 44 افسران و ملازمین

اس خبر کی تفصیل پڑھنے کیلئے یہاں پر کلک کیجئے

11/11/2015 - 22:22:13 :وقت اشاعت

:متعلقہ عنوان