قومی اسمبلی میں پیپلز پارٹی، پی ٹی آئی اور جماعت اسلامی کی مخالفت کے باوجود پاکستان ..
بند کریں
تازہ ترین ایڈ یشن کے لیے ابھی کلک کریں
بدھ نومبر

مزید اہم خبریں

وقت اشاعت: 11/11/2015 - 19:55:04 وقت اشاعت: 11/11/2015 - 19:55:04 وقت اشاعت: 11/11/2015 - 19:55:04 وقت اشاعت: 11/11/2015 - 19:53:03 وقت اشاعت: 11/11/2015 - 19:53:03 وقت اشاعت: 11/11/2015 - 19:53:03 وقت اشاعت: 11/11/2015 - 19:51:05 وقت اشاعت: 11/11/2015 - 19:40:56 وقت اشاعت: 11/11/2015 - 19:40:56 وقت اشاعت: 11/11/2015 - 19:37:33 وقت اشاعت: 11/11/2015 - 19:37:33
پچھلی خبریں - مزید خبریں

اسلام آباد

قومی اسمبلی میں پیپلز پارٹی، پی ٹی آئی اور جماعت اسلامی کی مخالفت کے باوجود پاکستان آرمی ایکٹ ،صنفی مزدوروں ، غیر ہنر مند کارکنان کی اجرت کے ترمیمی بل 2015 کثرت رائے سے منظور

نفیسہ شاہ کی کم از کم اجرت 13ہزار کی بجائے 18ہزار مقرر کرنے کی ترمیم تکنیکی بنیاد پر مسترد

اسلام آباد (اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔11 نومبر۔2015ء)قومی اسمبلی میں پیپلز پارٹی، پی ٹی آئی اور جماعت اسلامی کی مخالفت کے باوجود پاکستان آرمی ایکٹ ترمیمی بل 2015 سمیت صنفی مزدوروں کی کم از کم اجرت کا ترمیمی بل کم از کم اجرت برائے غیر ہنر مند کارکنان ترمیمی بل 2015 کثرت رائے سے منظور کرلیاگیا، آرمی ایکٹ ترمیمی بل کے ذریعے حکومت کو اختیار دیا گیا کہ جیلوں میں پہلے سے موجود قیدیوں کو بھی آرمی ایکٹ کے تحت چالان کر سکے گی جبکہ کم از کم اجرت ترمیمی بل کے تحت مزدوروں کی کم از کم اجرت 12ہزار سے بڑھا کر13ہزار مقرر کرنے کو قانونی تحفظ فراہم کیا گیا ہے۔

پی پی پی کی نفیسہ شاہ کی کم از کم اجرت 13ہزار کی بجائے 18ہزار مقرر کرنے کی ترمیم تکنیکی بنیاد پر مسترد کر دی گئی۔ بدھ کو وزیر دفاع خواجہ آصف کی عدم موجودگی میں پارلیمانی سیکرٹری دفاع چوہدری جعفر اقبال نے آرمی ایکٹ ترمیمی بل زیر بحث لانے کی تحریک پیش کی تو پی ٹی آئی کی شیریں مزاری ، عارف علوی، پی پی پی کے سید نوید قمر اور جماعت اسلامی کے طارق اﷲ خان نے بل کی مخالفت

اس خبر کی تفصیل پڑھنے کیلئے یہاں پر کلک کیجئے

11/11/2015 - 19:53:03 :وقت اشاعت