نسلی کشیدگی پر میسوری یونیورسٹی کے صدر و چانسلر مستعفی
بند کریں
تازہ ترین ایڈ یشن کے لیے ابھی کلک کریں
منگل نومبر

مزید بین الاقوامی خبریں

وقت اشاعت: 10/11/2015 - 15:04:44 وقت اشاعت: 10/11/2015 - 14:12:40 وقت اشاعت: 10/11/2015 - 14:12:40 وقت اشاعت: 10/11/2015 - 14:12:40 وقت اشاعت: 10/11/2015 - 14:10:48 وقت اشاعت: 10/11/2015 - 14:10:48 وقت اشاعت: 10/11/2015 - 14:10:48 وقت اشاعت: 10/11/2015 - 14:09:09 وقت اشاعت: 10/11/2015 - 14:09:09 وقت اشاعت: 10/11/2015 - 14:07:59 وقت اشاعت: 10/11/2015 - 14:06:52
پچھلی خبریں - مزید خبریں

نسلی کشیدگی پر میسوری یونیورسٹی کے صدر و چانسلر مستعفی

نیویارک(اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔10 نومبر۔2015ء)امریکہ کی میسوری یونیورسٹی کے صدر اور چانسلر دونوں نے اپنے عہدوں سے مستعفیٰ ہونے کا اعلان کیا ہے۔ ان کی طرف سے یہ اعلان طلباء کی طرف سے ایک بڑے مطالبہ کے ردعمل میں سامنے آیا جس میں ان کا کہنا تھا کہ یونیورسٹی کی قیادت نے کیمپس پر نسلی امتیاز اور اس طرح کے دیگر مبینہ واقعات سے نمٹنے کے لیے مناسب اقدامات نہیں اٹھائے۔

سکول سسٹم کے صدر ٹم وولف نے اپنے عہدے سے مستعفی ہونے کا جذباتی اعلان یونیوسٹی کے مرکزی کمیپس کی انتظامی کونسل کے اجلاس کے دوران کیا۔ میسوری کی وسطی ریاست کا یہ کمیپس 35,000 طلباء پر مشتمل ہے۔ انہوں نے کہا کہ میں اس مایوسی کی مکمل ذمہ داری لیتا ہوں اور میں اس حوالے سے کوئی اقدام نہ اٹھانے کی بھی مکمل ذمہ داری لیتا ہوں۔ اس معاملے نے اس وقت قومی سطح پر توجہ حاصل کر لی جب طلباء کی تنظیم

اس خبر کی تفصیل پڑھنے کیلئے یہاں پر کلک کیجئے

10/11/2015 - 14:10:48 :وقت اشاعت