چین کی افغان حکومت اورطالبان کے درمیان مذاکرات کیلئے میزبانی کی پیش کش
بند کریں
تازہ ترین ایڈ یشن کے لیے ابھی کلک کریں
پیر نومبر

مزید اہم خبریں

وقت اشاعت: 09/11/2015 - 21:52:42 وقت اشاعت: 09/11/2015 - 21:49:07 وقت اشاعت: 09/11/2015 - 21:49:07 وقت اشاعت: 09/11/2015 - 21:46:32 وقت اشاعت: 09/11/2015 - 21:44:30 وقت اشاعت: 09/11/2015 - 21:43:14 وقت اشاعت: 09/11/2015 - 21:43:14 وقت اشاعت: 09/11/2015 - 21:43:14 وقت اشاعت: 09/11/2015 - 21:37:26 وقت اشاعت: 09/11/2015 - 21:37:26 وقت اشاعت: 09/11/2015 - 21:37:26
پچھلی خبریں - مزید خبریں

اسلام آباد

چین کی افغان حکومت اورطالبان کے درمیان مذاکرات کیلئے میزبانی کی پیش کش

جنگ کسی مسئلے کاحل نہیں،افغان مسئلے کاسیاسی حل تلاش کرناہوگا،ڈینگ شی چن

اسلام آباد(اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔9 نومبر۔2015ء) چین نے افغان حکومت اورطالبان کے درمیان مذاکرات کیلئے میزبانی کی پیش کش کرتے ہوئے دونوں فریقین کے درمیان چین کے مصالحتی کردار کو مسترد کردیا ہے۔میڈیا رپورٹ کے مطابق چین کے نمائندہ خصوصی برائے افغانستان ڈینگ شی چن نے اسلام آباد سے کابل روانگی سے قبل ایک انٹرویو میں بتایا کہ افغانستان کے سیاسی عمل میں طالبان اہم قوت ہیں،چین نے پہلے بھی افغان امن عمل میں سہولت کار کا کردار اداکیا اگر دونوں فریقین آمادہ ہوجائیں توچین افغانستان کے امن و استحکام کیلئے ایک بارپھر مذاکرات میں بطور سہولت کارکرداراداکرنے کے لیے تیارہے اورمذاکرات کیلئے مناسب وینیوبھی فراہم کر سکتا ہے۔

انھوں نے کہاکہ چین مری میں ہونے والے مذاکراتی عمل کی بحالی چاہتاہے،ہم افغانستان میں استحکام کیلئے پاکستان کے کردارکے حامی ہیں،افغان لیڈرشپ اور پاکستانی حکام امن عمل کی بحالی سے متعلق پرامید ہیں،مثبت سوچ اورمشترکہ کوششوں کے نتیجے میں ہم اپنا ہدف حاصل کرسکتے ہیں،پاکستان اورافغانستان کے درمیان تلخیاں دور کرنے

اس خبر کی تفصیل پڑھنے کیلئے یہاں پر کلک کیجئے

09/11/2015 - 21:43:14 :وقت اشاعت

:متعلقہ عنوان