ایاز صادق 268 ووٹ لیکر دوبارہ سپیکر قومی اسمبلی منتخب، شفقت محمود نے 31 ووٹ حاصل ..
بند کریں
تازہ ترین ایڈ یشن کے لیے ابھی کلک کریں
پیر نومبر

مزید اہم خبریں

وقت اشاعت: 09/11/2015 - 18:54:15 وقت اشاعت: 09/11/2015 - 18:43:26 وقت اشاعت: 09/11/2015 - 18:40:07 وقت اشاعت: 09/11/2015 - 18:31:16 وقت اشاعت: 09/11/2015 - 18:31:16 وقت اشاعت: 09/11/2015 - 18:29:34 وقت اشاعت: 09/11/2015 - 18:29:34 وقت اشاعت: 09/11/2015 - 18:29:34 وقت اشاعت: 09/11/2015 - 18:27:43 وقت اشاعت: 09/11/2015 - 18:27:43 وقت اشاعت: 09/11/2015 - 18:24:55
پچھلی خبریں - مزید خبریں

اسلام آباد

ایاز صادق 268 ووٹ لیکر دوبارہ سپیکر قومی اسمبلی منتخب، شفقت محمود نے 31 ووٹ حاصل کئے

ہنی مون پیریڈ ختم ہو چکا ابھی تک حکومت نے کوئی کارنامہ انجام نہیں دیا،خورشیدشاہ،ایم کیو ایم اور ایاز صادق کی کہانی ایک جیسی ہے،فاروق ستار، صاحبزادہ طارق اللہ و دیگر کا اظہار خیال

اسلام آباد (اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔9 نومبر۔2015ء) پاکستان مسلم لیگ ن کے امیدوار سردار ایاز صادق 268 ووٹ لیکر دوبارہ سپیکر قومی اسمبلی منتخب ہو گئے‘ ہیں۔قائم مقام سپیکر جاوید مرتضیٰ عباسی نے نو منتخب سپیکر سے عہدے کا حلف لیا۔ سپیکر کا انتخاب کے لئے ووٹنگ قومی اسمبلی میں پیر کے روز صبح 9 بجے شروع ہو کر ایک بجے تک جاری رہی۔ سپیکر کے انتخاب میں کل 300 اراکین نے اپنا حق رائے دہی استعمال کیا۔

سردار ایاز صادق کے مخالف امیدوار پی ٹی آئی کے شفقت محمود نے 31 ووٹ حاصل کئے جبکہ ایک ووٹ ضائع قرار دیا گیا۔ سپیکر کے انتخاب میں پی ٹی آئی کے علی محمد خان اور مسلم لیگ ن کی جانب سے طاہرہ اورنگزیب نے پولنگ ایجنٹ کے فرائض انجام دیئے۔ سپیکر کے انتخاب میں پریذائیڈنگ آفیسر کے فرائض سیکرٹری قومی اسمبلی نے سرانجام دیئے۔ ووٹوں کی گنتی اور نتائج کا اعلان قائم مقام سپیکر جاوید مرتضیٰ عباسی نے کیا۔

ایاز صادق کے منتخب ہونے کے اعلان کے بعد ایوان زریں شیر آیا شیر آیا کے نعروں سے گونج اٹھا۔ اس موقع پر پی ٹی آئی اراکین ایوان میں خاموش رہے۔ سردار ایاز صادق کی حمایت اپوزیشن جماعتیں‘ پیپلزپارٹی‘ جماعت اسلامی‘ ایم کیو ایم‘ پختونخوا عوامی ملی پارٹی‘ مسلم لیگ ق‘ جمعیت علمائے اسلام اور این پی سمیت دیگر جماعتوں نے کی جس کے نتیجے میں سردار ایاز صادق 268 ووٹ لیکر دوبارہ قومی اسمبلی سپیکر منتخب ہو گئے۔

سپیکر کے انتخاب میں وزیراعظم نواز شریف نے بھی اپنا ووٹ کاسٹ کیا۔ تاہم کابینہ کے متعدد اراکین نے انتخاب میں حصہ نہیں لیا۔ سپیکر کا انتخاب خوش اسلوبی سے سرانجام پایا۔ انتخاب کے وقت مہمانوں کی آمد سے گیلریاں کھچا کھچ بھر ہوئی تھیں۔ نومنتخب سپیکر قومی اسمبلی ایاز صادق نے ایوان زریں سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ اللہ کا شکر ادا کرتا ہوں کہ انہوں نے مجھے دوبارہ منصب عطا کیا اور پاکستان میں ایک نئی تاریخ رقم ہوئی کہ ایک ہی مدت میں دو مرتبہ سپیکر قومی اسمبلی منتخب ہوا ہوں۔

انہوں نے کہا کہ میری کامیابی جمہوریت اور آئین کی فتح ہے ایاز صادق نے وزیراعظم نواز شریف‘ خورشید شاہ‘ فاروق ستار‘ مولانا فضل الرحمان‘ فاٹا اراکین‘ جماعت اسلامی‘ مسلم لیگ ق‘ عوامی نیشنل پارٹی اور دیگر اراکین کا بھی شکریہ ادا کیا کہ انہوں نے مجھے دوتہائی اکثریت سے ایوان میں کامیاب کرایا۔ ایاز صادق نے کہا کہ پی ٹی آئی کے ممبران کا بھی شکر گزار ہوں جنہوں نے جمہوریت پر یقین رکھتے ہوئے مقابلے میں حصہ لیا۔

ایاز صادق نے کہا کہ اب مل کر جمہوریت اور آئین کا دفاع کرینگے۔ پورے ایوان کی مشاورت سے جمہوریت اور آئین کے دفاع کو مستحکم کرنے کے لئے اور اسے فعال بنانے کے لئے مل کر کام کرینگے۔ ہاؤس بزنس ایڈوائزری کمیٹی کو مشاورت کے ساتھ چلائیں گے۔ کشمیر کے مسئلے کو اپنے ایجنڈے میں رکھ کر آگے بڑھائیں گے‘ آزادی اظہار رائے کا مکمل خیال رکھا جائے گا۔

ایاز صادق نے صحافیوں کو مخاطب کرتے ہوئے کہا کہ پاکستان کا بہتر ساکھ دیگر ممالک میں اجاگر کرنے کے لئے سخت محنت کی ضرورت ہے۔ پی ٹی آئی کے رکن قومی اسمبلی شفقت محمود نے کہا کہ پی ٹی آئی نے بطور اپوزیشن اپنا کردار خوش اسلوبی سے ادا کیا لیکن پارلیمنٹ میں جن اصلاحات کی ضرورت ہے انہیں بھی پایہ تکمیل تک پہنچایا جائے۔ انہوں نے کہا کہ انتخابی اصلاحاتی کمیٹی کا وجود خوش آئند ہے لیکن الیکشن ریفارمز پر بھی غور ہونا چاہئے۔

انہوں نے کہا کہ نیشنل ایکشن پلان اور دیگر بڑے اہم اقدام پارلیمنٹ کے باہر ہوئے انہیں آئندہ پارلیمنٹ میں ہونا چاہئے۔ پیپلز پارٹی کے اپوزیشن لیڈر سید خورشید شاہ نے سپیکر قومی اسمبلی کو مبارکباد پیش کرتے ہوئے کہا کہ آپ کا

اس خبر کی تفصیل پڑھنے کیلئے یہاں پر کلک کیجئے

09/11/2015 - 18:29:34 :وقت اشاعت