سارک ممالک کے اراکین کی یونیورسٹی گرانٹس کمیشن کی کمیٹی کے سربراہان کی دسویں میٹنگ ..
بند کریں
تازہ ترین ایڈ یشن کے لیے ابھی کلک کریں
پیر جون

مزید اہم خبریں

وقت اشاعت: 15/06/2015 - 21:44:20 وقت اشاعت: 15/06/2015 - 21:43:08 وقت اشاعت: 15/06/2015 - 21:41:19 وقت اشاعت: 15/06/2015 - 21:39:19 وقت اشاعت: 15/06/2015 - 21:22:04 وقت اشاعت: 15/06/2015 - 21:16:22 وقت اشاعت: 15/06/2015 - 21:11:32 وقت اشاعت: 15/06/2015 - 21:11:32 وقت اشاعت: 15/06/2015 - 21:11:32 وقت اشاعت: 15/06/2015 - 21:09:44 وقت اشاعت: 15/06/2015 - 21:09:44
پچھلی خبریں - مزید خبریں

اسلام آباد

سارک ممالک کے اراکین کی یونیورسٹی گرانٹس کمیشن کی کمیٹی کے سربراہان کی دسویں میٹنگ کا اسلام آباد میں انعقاد

ہائیر ایجوکیشن کمیشن پاکستان کے چیئرمین نے کمیٹی کے چیئرپرسن کا عہدہ سنبھال لیا، مشیر خارجہ کاسارک ممالک کے ممبران کے یونیورسٹی گرانٹس کمیشن ،مساوی اداروں کے سربراہان کے دسویں اجلاس کا افتتاح , پاکستان سارک کے معمار ملک کی حیثیت سے سارک کے مرکزی چارٹر‘ سماجی چارٹر اور اس کے ترقیاتی اہداف کو پورا کرنے کیلئے پر عزم ہے، سرتاج عزیز کاتقریب سے خطاب

اسلام آباد ( اُردو پوائنٹ اخبار تازہ ترین۔ 15 جون۔2015ء )خارجہ امور کیلئے وزیر اعظم کے مشیر سرتاج عزیز نے سارک ممالک کے ممبران کے یونیورسٹی گرانٹس کمیشن ،مساوی اداروں کے سربراہان کے دسویں اجلاس کا افتتاح کیا۔ اس کے بعد پاکستان کو کمیٹی کی صدارت کیلئے چنا گیا۔ ڈاکٹر مختار احمد چیئرمین ایچ ای سی نے یو جی سی/مساوی اداروں کی کمیٹی کے چیئرپرسن کا عہدہ سنبھالا۔

اس موقع پر خطاب کرتے ہوئے سرتاج عزیز نے افغانستان ‘ انڈیا‘ بنگلہ دیش‘ بھوٹان‘ نیپال‘ مالدیپ اور سری لنکا سے پاکستان آئے ہوئے وفود کو خوش آمدید کہا۔ انہوں نے سارک کے تحت تقریب کے کامیاب انعقاد کیلئے کی جانے والی ایچ ای سی کی کوششوں پر مبارکباد پیش کی۔ انہوں نے کہا کہ پاکستان سارک کے معمار ملک کی حیثیت سے سارک کے مرکزی چارٹر‘ سماجی چارٹر اور اس کے ترقیاتی اہداف کو پورا کرنے کے لئے پر عزم ہے۔

انہوں نے گزشتہ سالوں میں سارک کے خیالات اور مقاصد کو پورا کرنے کی پاکستانی کوششوں کو نمایاں کیا۔ انہوں نے تعلیم اور خواندگی کے شعبہ جات میں ہمہ گیر تجزیہ پیش کیا اور کہا کہ اعلیٰ تعلیم کو پرائمری اور سیکنڈری تعلیم کی سطح سے جدا نہیں کیا جا سکتا۔تعلیم کی ہر سطح پر معیار میں بہتری لازمی ہے ورنہ تفاوت پیدا ہو گی۔ انہوں نے ہائیر ایجوکیشن کمیشن بننے کے بعد کی پراگریس پر روشنی ڈالی۔

انہوں نے کم ترقی یافتہ علاقوں کے طلباء کے لئے حکومت کی فیس واپسی کی سکیم ‘ایک لاکھ طلبہ کے لئے قومی سطح پر ٹیکنیکل آگاہی دینے کیلئے لیپ ٹاپس سکیم اور یوتھ انٹر شپ پروگرام کا تذکرہ کیا۔ انہوں نے معاشی اور سماجی ترقی اور با علم معیشت کے حصول کیلئے وژن 2025کے بارے میں بھی آگاہی دی۔ ڈاکٹر مختار احمد نے اپنے افتتاحی خطاب میں رخصت ہونے والے چیئرپرسن

اس خبر کی تفصیل پڑھنے کیلئے یہاں پر کلک کیجئے

15/06/2015 - 21:16:22 :وقت اشاعت