امریکہ و مغربی طاقتیں پاکستان کو کبھی ترقی نہیں کرنے دیں گے ، اگر ہم ترقی کرنا ..
بند کریں
تازہ ترین ایڈ یشن کے لیے ابھی کلک کریں
جمعہ جون

مزید اہم خبریں

وقت اشاعت: 12/06/2015 - 14:54:02 وقت اشاعت: 12/06/2015 - 14:54:02 وقت اشاعت: 12/06/2015 - 14:54:02 وقت اشاعت: 12/06/2015 - 14:52:56 وقت اشاعت: 12/06/2015 - 14:49:46 وقت اشاعت: 12/06/2015 - 14:49:46 وقت اشاعت: 12/06/2015 - 14:49:46 وقت اشاعت: 12/06/2015 - 14:42:26 وقت اشاعت: 12/06/2015 - 14:39:34 وقت اشاعت: 12/06/2015 - 14:39:12 وقت اشاعت: 12/06/2015 - 14:37:16
پچھلی خبریں - مزید خبریں

اسلام آباد

امریکہ و مغربی طاقتیں پاکستان کو کبھی ترقی نہیں کرنے دیں گے ، اگر ہم ترقی کرنا چاہتے ہیں تو ملکی وسائل پر انحصار کرتے ہوئے انہیں حرکت میں لانا ہوگا ، بدقسمتی سے جو بھی حکومت آتی ہے ملکی وسائل کو حرکت میں لانے کی بجائے بیرونی قرضوں کو ترجیح دیتی ہے

جمعیت علماء اسلام (ف) کے سربراہ مولانا فضل الرحمن کاقومی اسمبلی کے اجلاس میں بجٹ پر بحث کے دوران خطاب

اسلام آباد ( اُردو پوائنٹ اخبار تازہ ترین۔ 12 جون۔2015ء ) جمعیت علماء اسلام (ف) کے سربراہ مولانا فضل الرحمن نے کہا ہے کہ امریکہ و مغربی طاقتیں پاکستان کو کبھی ترقی نہیں کرنے دیں گے ، اگر ہم ترقی کرنا چاہتے ہیں تو ملکی وسائل پر انحصار کرتے ہوئے انہیں حرکت میں لانا ہوگا ، مگر بدقسمتی سے جو بھی حکومت آتی ہے ملکی وسائل کو حرکت میں لانے کی بجائے بیرونی قرضوں کو ترجیح دیتی ہے ، پاکستانی عوام سمجھتے ہیں کہ ان کے ادا کردہ ٹیکسوں کی رقم ان کی فلاح و بہبود کی بجائے عالمی مالیاتی اداروں کو قرضوں کی واپسی پر خرچ ہوں گے ، حکومت کشمیری مہاجرین کے گزارہ الاؤنس میں دوسو فیصد تک اضافہ کرے ، سودی نظام کا خاتمہ کیا جائے ، امریکہ و یورپ کی بجائے چین اور ترکی سے معاشی و تجارتی تعلقات کو فروغ دیا جائے ، پارلیمنٹ کی کشمیر کمیٹی کے اختیارات میں اضافہ کیا جائے ، پارلیمنٹ اسلامی نظریاتی کونسل کی سفارشات پر جمود کا شکار ہے ، اپنی قانون سازی کی جائے کہ صرف مذہب کا نام لینے والوں کو دہشتگرد قرار نہ دیا جائے ۔

وہ جمعہ کو قومی اسمبلی کے اجلاس میں بجٹ پر بحث کے دوران خطاب کررہے تھے ۔ انہوں نے کہا کہ قومی اسمبلی کے بجٹ اجلاس میں حکومتی و اپوزیشن ارکان نے جو تجاویز پیش کی ہیں ، حکومت کو چاہیے کہ انہیں اہمیت دے ، بجٹ صرف اعداد و شمار کا نام نہیں کیونکہ حکومت بجٹ میں پورے سال کی آمدنی و اخراجات کا ایک تخمینہ لگالیتی ہے لیکن اگر زلزلہ یا سیلاب آجائے تو لازمی طور پر حکومتی ترجیحات تبدیل ہو جاتی ہیں ۔

مولانا فضل الرحمن نے کہا کہ امن کے بغیر مستحکم معیشت کا کوئی تصور موجود نہیں ہمیں یہ بات مد نظر رکھتی چاہیے بالخصوص پاکستان بارے بھارت کا جو رویہ ہے اسے سنجیدگی سے لینا چاہیے ، حال ہی میں بھارتی وزیراعظم نے پاکستان کو توڑنے میں بھارت کے کردار کا جو اعتراف کیا وہ قابل مذمت ہے ، دراصل بھارت پاکستان کی معیشت کو بحران زدہ بنانے کیلئے جنگ کی جانب کھینچ رہا ہے حالانکہ پاکستان اس خطے میں امن کا داعی ہے کیونکہ اسلام ہمیشہ امن کا درس دیتا ہے ۔

انہوں نے کہا کہ امریکہ امن کے نام پر پوری دنیا کو اپنے شکنجے میں لینا چاہتا ہے ، وہ افغانستان میں امن قائم کرنے یا اسامہ بن لادن کو تلاش کرنے نہیں بلکہ اپنے مفادات کیلئے آیا تھا آج اس نے وہ آگ ہماری سرحدوں کے اندر دھکیل دی ہے ۔ انہوں نے کہا کہ کشمیری مہاجرین آج بھی اسی پھٹے پرانے خیمے

مکمل خبر پڑھنے کیلئے یہاں پر کلک کیجئے

12/06/2015 - 14:49:46 :وقت اشاعت