وفاقی حکومت کی جانب سے آئندہ بجٹ میں خیبر پختونخوا کی معیشت کی ازسر نو بحالی کے ..
بند کریں
تازہ ترین ایڈ یشن کے لیے ابھی کلک کریں
جمعرات جون

مزید تجارتی خبریں

وقت اشاعت: 11/06/2015 - 14:58:55 وقت اشاعت: 11/06/2015 - 14:57:20 وقت اشاعت: 11/06/2015 - 14:24:28 وقت اشاعت: 11/06/2015 - 14:21:54 وقت اشاعت: 11/06/2015 - 14:21:52 وقت اشاعت: 11/06/2015 - 14:20:57 وقت اشاعت: 11/06/2015 - 14:18:26 وقت اشاعت: 11/06/2015 - 14:18:25 وقت اشاعت: 11/06/2015 - 13:17:53 وقت اشاعت: 11/06/2015 - 13:17:53 وقت اشاعت: 11/06/2015 - 13:17:52
پچھلی خبریں - مزید خبریں

اسلام آباد

وفاقی حکومت کی جانب سے آئندہ بجٹ میں خیبر پختونخوا کی معیشت کی ازسر نو بحالی کے لئے انکم ٹیکس اور ٹرن اوور ٹیکس میں 5 سال کے لئے چھوٹ خوش آئند اقدام ہے، دہشت گردی کے خلاف فرنٹ لائن صوبے کی حیثیت سے خیبرپختونخوا کو زیادہ توجہ دینے کی ضرورت ہے ، پبلک پرائیویٹ پارٹنر شپ کے ذریعے اس صوبے کی معیشت کو استحکام کی جانب گامزن کیا جاسکتا ہے تاہم اس مقصد کے لئے حکومت کی سرپرستی درکار ہے، افغانستان کے ساتھ فری ٹریڈ ایگریمنٹ کرنے کی ضرورت ہے

خیبر پختونخوا چیمبر آف کامرس اینڈانڈسٹری کے صدرفواد ا سحق کی اے پی پی سے گفتگو

اسلام آباد ۔ 11 جون (اُردو پوائنٹ اخبار تازہ ترین۔ 11 جون۔2015ء) خیبر پختونخوا چیمبر آف کامرس اینڈانڈسٹری کے صدرفواد ا سحق نے کہا ہے کہ وفاقی حکومت کی جانب سے آئندہ مالی سال کے بجٹ میں خیبر پختونخوا کی دہشت گردی سے متاثرہ معیشت کی ازسر نو بحالی کے لئے انکم ٹیکس اور ٹرن اوور ٹیکس میں 5 سال کے لئے چھوٹ دینا خوش آئند اقدام ہے، دہشت گردی کے خلاف فرنٹ لائن صوبے کی حیثیت سے خیبرپختونخوا کو زیادہ توجہ دینے کی ضرورت ہے ، پبلک پرائیویٹ پارٹنر شپ کے ذریعے اس صوبے کی معیشت کو استحکام کی جانب گامزن کیا جاسکتا ہے تاہم اس مقصد کے لئے حکومت کی سرپرستی درکار ہے، افغانستان کے ساتھ فری ٹریڈ ایگریمنٹ کرنے کی ضرورت ہے۔

ان خیالات کا اظہار انہوں نے جمعرات کو اے پی پی سے گفتگو کرتے ہوئے کیا ۔ فواد اسحا ق نے کہاکہ صوبے میں سہولیات کی عدم دستیابی کی وجہ سے صنعتکار اور کاروباری طبقہ نامساعد حالات میں بڑی دلیری اور محنت سے کاروباری سرگرمیاں جاری رکھے ہوئے ہے۔ انہوں نے کہا کہ معاشی پالیسیوں میں استحکام سے صوبے میں انڈسٹریلائزیشن اور کاروبار کو فروغ دیا جاسکتا ہے ۔

انہوں نے کہا کہ پبلک پرائیویٹ پارٹنر شپ کے ذریعے نجی شعبہ اور حکومت مل کر اس صوبے کی معیشت کو استحکام کی جانب گامزن کرسکتے ہیں اور اس مقصد کے لئے حکومت کی سرپرستی درکار ہے ۔انہوں نے کہاکہ کھانے پینے کی اشیاء

اس خبر کی تفصیل پڑھنے کیلئے یہاں پر کلک کیجئے

11/06/2015 - 14:20:57 :وقت اشاعت