ہندو خواتین کا اغوا، جبری مذہب تبدیلی اوربعدازاں شادی ملک کو لاحق مہلک ترین اندرونی ..
بند کریں
تازہ ترین ایڈ یشن کے لیے ابھی کلک کریں
منگل جنوری

مزید اہم خبریں

وقت اشاعت: 07/01/2014 - 21:22:10 وقت اشاعت: 07/01/2014 - 21:22:10 وقت اشاعت: 07/01/2014 - 21:22:10 وقت اشاعت: 07/01/2014 - 21:21:32 وقت اشاعت: 07/01/2014 - 21:21:32 وقت اشاعت: 07/01/2014 - 21:19:11 وقت اشاعت: 07/01/2014 - 21:18:35 وقت اشاعت: 07/01/2014 - 20:01:09 وقت اشاعت: 07/01/2014 - 20:01:09 وقت اشاعت: 07/01/2014 - 20:01:09 وقت اشاعت: 07/01/2014 - 19:58:06
پچھلی خبریں - مزید خبریں

اسلام آباد

ہندو خواتین کا اغوا، جبری مذہب تبدیلی اوربعدازاں شادی ملک کو لاحق مہلک ترین اندرونی خطرہ ہے، ڈاکٹر رمیش کمار،سندھ سے ہندو خاتون لکھی بھیل اور پشاور سے ہندو ٹیچر سپنارانی کاحالیہ اغوا افسوسناک ہے، سربراہ پاکستان ہندو کونسل، محب وطن اقلیتوں کومنصفانہ حقوق اور تحفظ دینے کا ضامن آئین ہے، ممبر قومی اسمبلی ن لیگ

اسلام آباد(اُردو پوائنٹ اخبار تازہ ترین۔7 جنوری ۔2014ء) ممبرقومی اسمبلی اور پاکستان ہندو کونسل کے سربراہ ڈاکٹر رمیش کمار نے ملک میں ہندو خواتین کے اغوا اور بعد ازاں جبری طور پرمذہب تبدیلی اور شادی کے بڑھتے ہوئے رحجان پر شدید غم و غصے کا اظہار کرتے ہوئے اسے پاکستان کی سا لمیت کو لاحق شدید ترین اندرونی خطرہ قرار دیا ہے۔ وہ پارلیمنٹ ہاوٴس اسلام آباد کے باہر میڈیا سے غیررسمی بات چیت کررہے تھے۔

مسلم لیگ ن سے تعلق رکھنے والے ممبر قومی اسمبلی کا کہنا تھا کہ یہ افسوسناک عمل صرف سندھ تک ہی محدود نہیں بلکہ پورا ملک اسکی لپیٹ میں ہے لیکن خوف، شرم اور دیگر معاملے کی حساسیت کی بناء پراس کی پردہ پوشی کرکے درحقیقت حوصلہ افزائی کی جارہی ہے۔ ڈاکٹر رمیش کمار نے حال ہی میں پنوں عاقل سے ایک ہندو خاتون لکھی بھیل کے اغوا کا تذکرہ کرتے

اس خبر کی تفصیل پڑھنے کیلئے یہاں پر کلک کیجئے

07/01/2014 - 21:19:11 :وقت اشاعت