آئی جی کے پی کے کا کنٹریکٹ پر بھرتی کیے گئے 12 ہزار خصوصی پولیس اہلکاروں کو نکالنے ..
بند کریں
تازہ ترین ایڈ یشن کے لیے ابھی کلک کریں
اتوار مئی

مزید قومی خبریں

وقت اشاعت: 29/05/2016 - 14:17:46 وقت اشاعت: 29/05/2016 - 14:17:46 وقت اشاعت: 29/05/2016 - 14:16:11 وقت اشاعت: 29/05/2016 - 13:44:55 وقت اشاعت: 29/05/2016 - 13:44:55 وقت اشاعت: 29/05/2016 - 13:44:55 وقت اشاعت: 29/05/2016 - 13:43:12 وقت اشاعت: 29/05/2016 - 13:43:12 وقت اشاعت: 29/05/2016 - 13:41:41 وقت اشاعت: 29/05/2016 - 13:41:41 وقت اشاعت: 29/05/2016 - 13:41:40
پچھلی خبریں - مزید خبریں

پشاور

آئی جی کے پی کے کا کنٹریکٹ پر بھرتی کیے گئے 12 ہزار خصوصی پولیس اہلکاروں کو نکالنے کے فیصلے پرتحفظات کا اظہار

فیصلے سے دہشت گردی کے تدارک اور پاک چین اقتصادی راہداری منصوبے کو محفوظ بنانے میں مشکلات پیش آئیں گی آئی جی , حکومت کے فیصلے سے پولیس سیکیورٹی کا نظام مزید کمزور ہوجائے گا ناصر خان درانی کا انٹرویو

پشاور(اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔29 مئی۔2016ء) خیبر پختونخوا کے وزیر اعلیٰ کی جانب سے کنٹریکٹ پر بھرتی کیے گئے 12 ہزار خصوصی پولیس اہلکاروں کو نکالنے کے فیصلے پر انسپکٹر جنرل (آئی جی) پولیس نے تحفظات کا اظہار کیا ہے۔ایک انٹرویو میں خیبر پختونخوا کے آئی جی ناصر خان درانی نے کہا کہ صوبے میں پہلے ہی امن اومان کی صورتحال بہتر نہیں ہے جبکہ حکومت کے اس فیصلے سے صوبے میں دہشت گردی کے تدارک اور پاک چین اقتصادی راہداری (سی-پیک) منصوبے کو محفوظ بنانے میں مشکلات پیش آئیں گی۔

خیبر پختونخوا حکومت کے فیصلے پر تحفظات کا اظہار کرتے ہوئے ان کا کہنا تھا کہ 2007 میں صوبے میں امن اومان کی صورتحال بدترین تھی، اس وقت 67 ہزار پولیس اہلکاروں کو بھرتی کیا گیا تھا دہشتگردی کے خلاف جنگ میں کئی جوان قربانیاں دے چکے ہیں۔انہوں نے کہا کہ اب پولیس کو شاہراہ قراقرم کی سیکیورٹی کے معاملات بھی سونپ دیئے گئے جو پولیس اہلکاروں کی موجودہ تعداد میں ہی کی جانی ہے۔

ناصر خان درانی نے کہاکہ صوبے

اس خبر کی تفصیل پڑھنے کیلئے یہاں پر کلک کیجئے

29/05/2016 - 13:44:55 :وقت اشاعت