گزشتہ تین سالوں سے بد عنوان نظام کے خاتمے اور اداروں کی بحالی میں مصروف ہے،پرویزخٹک
بند کریں
تازہ ترین ایڈ یشن کے لیے ابھی کلک کریں
ہفتہ مئی

مزید قومی خبریں

وقت اشاعت: 28/05/2016 - 20:22:34 وقت اشاعت: 28/05/2016 - 20:20:57 وقت اشاعت: 28/05/2016 - 20:20:57 وقت اشاعت: 28/05/2016 - 20:19:50 وقت اشاعت: 28/05/2016 - 20:19:50 وقت اشاعت: 28/05/2016 - 20:19:50 وقت اشاعت: 28/05/2016 - 20:18:27 وقت اشاعت: 28/05/2016 - 20:16:28 وقت اشاعت: 28/05/2016 - 20:16:28 وقت اشاعت: 28/05/2016 - 20:15:12 وقت اشاعت: 28/05/2016 - 20:11:53
پچھلی خبریں - مزید خبریں

پشاور

پشاور شہر میں شائع کردہ مزید خبریں

وقت اشاعت: 18/01/2017 - 13:18:22 وقت اشاعت: 18/01/2017 - 17:25:13 وقت اشاعت: 18/01/2017 - 17:51:32 وقت اشاعت: 18/01/2017 - 17:51:44 وقت اشاعت: 18/01/2017 - 17:59:23 وقت اشاعت: 18/01/2017 - 17:59:23 پشاور کی مزید خبریں

گزشتہ تین سالوں سے بد عنوان نظام کے خاتمے اور اداروں کی بحالی میں مصروف ہے،پرویزخٹک

ترقیاتی منصوبے عوام کی ضرورت اور انکا حق ہے اسلئے وہ ان پر سیاست نہیں کرتے ، عوام کے وسائل کو ذاتی تشہیر اور مفادات کیلئے استعمال کرنا قوم سے ظلم اور نا انصافی کے مترادف سمجھتے ہیں،،وزیراعلی خیبرپختونخوا

پشاور(اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔28 مئی۔2016ء)وزیراعلیٰ خیبرپختونخوا پرویز خٹک نے نظام کی تبدیلی کو قومی ترقی و خوشحالی کیلئے ناگزیر قرار دیتے ہوئے کہا ہے کہ موجودہ صوبائی حکومت گزشتہ تین سالوں سے بد عنوان نظام کے خاتمے اور اداروں کی بحالی میں مصروف ہے جس کے نتائج برآمد ہونا شرو ع ہو چکے ہیں۔ ان خیالات کا اظہار انہوں نے اکبر پورہ ضلع نوشہرہ میں عوامی اجتماع سے خطاب کرتے ہوئے کیا ایم این اے ڈاکٹر عمران خٹک اور ایم پی اے میاں خلیق الرحمن نے بھی جلسے سے خطاب کیا اور صوبائی حکومت کے اصلاحاتی اقدامات پر روشنی ڈالی وزیراعلیٰ نے کہاکہ منتخب عوامی نمائندے عوام کے خدمت گار ہوتے ہیں مگر ماضی میں عوامی خدمت کی بجائے ذاتی مفادات نمایاں رہے انہوں نے کہاکہ عوام کو تعلیم و صحت کے یکساں مواقع فراہم کرنا سب سے اہم منصوبہ ہے جس کی تکمیل کیلئے اقدامات جاری ہیں وزیراعلیٰ نے کہا کہ ماضی میں سکولوں اور ہسپتالوں پر کوئی توجہ نہیں دی گئی بلکہ بے جا سیاسی مداخلت نے انہیں تباہی کے دہانے پر لاکھڑا کر دیا وزیراعلیٰ نے صوبے میں اداروں کی تباہ حالی کا ذمہ دار سابقہ حکمرانوں کو قراردیتے ہوئے اس امر پر افسوس کا اظہار کیا کہ جب وہ حکومت میں آئے تو سکولوں کا برا حال تھا اُستاد موجود تھے اور نہ ہی مناسب عمارت موجود تھی انہوں نے کہا کہ امیر کے بچوں کو تمام سہولیات میسرہوں اورغریب کا بچہ ٹا ٹ پر بیٹھ کر دھوپ میں تعلیم حاصل کرے یہ کون سا انصاف ہے اور کو ن سا نظام ہے ۔

انہوں نے کہاکہ موجودہ حکومت امیر وغریب کو معیاری تعلیم کے یکساں مواقع فراہم کرنے کیلئے کوشاں ہیں۔ انہوں نے کہاکہ موجودہ حکومت نے نہ صرف بد عنوانی کا خاتمہ کرنے کیلئے تاریخی اقدامات کئے بلکہ تعمیر اتی منصوبوں کے معیار کو بھی یقینی بنایا جار ہا ہے انہوں نے کہاکہ یہ

اس خبر کی تفصیل پڑھنے کیلئے یہاں پر کلک کیجئے

28/05/2016 - 20:19:50 :وقت اشاعت

:متعلقہ عنوان