کرپشن کیخلاف ٹرین مارچ کا قافلہ کینٹ سٹیشن پشاور سے چل پڑا
بند کریں
تازہ ترین ایڈ یشن کے لیے ابھی کلک کریں
بدھ مئی

مزید قومی خبریں

وقت اشاعت: 25/05/2016 - 20:33:33 وقت اشاعت: 25/05/2016 - 20:31:42 وقت اشاعت: 25/05/2016 - 20:31:42 وقت اشاعت: 25/05/2016 - 20:31:41 وقت اشاعت: 25/05/2016 - 20:30:39 وقت اشاعت: 25/05/2016 - 20:30:39 وقت اشاعت: 25/05/2016 - 20:22:54 وقت اشاعت: 25/05/2016 - 20:16:17 وقت اشاعت: 25/05/2016 - 20:16:17 وقت اشاعت: 25/05/2016 - 20:16:17 وقت اشاعت: 25/05/2016 - 20:14:23
پچھلی خبریں - مزید خبریں

پشاور

کرپشن کیخلاف ٹرین مارچ کا قافلہ کینٹ سٹیشن پشاور سے چل پڑا

کرپٹ اشرافیہ کے حساب ،احتساب کا دن قریب آگیا ، پاکستان کو بچانے ،کرپشن کیخلاف عوام کو منظم کرنے کے لئے نکلا ہوں،سراج الحق , حکمران سن لیں اگر عدالت کے ذریعے احتساب نہ ہوا تو پھر مظلوم ،مجبور عوام کے ہاتھ ان کے گریبانوں پر ہوں گے، امیر جماعت اسلامی کا جلسے سے خطاب

پشاور(اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔25 مئی۔2016ء)امیر جماعت اسلامی سینیٹر سراج الحق کی قیادت میں کرپشن کے خلاف ٹرین مارچ کا قافلہ کینٹ سٹیشن پشاور سے چل پڑا۔ پشاور سے لالہ موسیٰ تک ریلوے سٹیشنوں پر ٹرین مارچ کے شرکاء کا پرتپاک استقبال کیا گیا۔کرپشن فری پاکستان ٹرین مارچ پشاور سے جماعت اسلامی کے سیکرٹری جنرل لیاقت بلوچ، امیر جماعت اسلامی خیبر پختونخوا مشتاق احمد خان ، سیکرٹری جنرل عبدالواسع اور جماعت اسلامی فاٹا کے امیر صاحبزادہ ہارون الرشید و دیگر قائدین نے بھی خطاب کیا۔

جبکہ اس موقع پرجماعت اسلامی کے مرکزی نائب امیر ڈاکٹر راشد نسیم، اسد اﷲ بھٹو، مرکزی سیکرٹری اطلاعات امیر العظیم، صوبائی سیکرٹری اطلاعات محمد اقبال و دیگر بھی موجود تھے۔ کینٹ ریلوے سٹیشن پر ٹرین کی روانگی سے قبل جلسہ عام سے خطاب کرتے ہوئے امیر جماعت اسلامی سینیٹر سراج الحق نے کہا کہ کرپٹ اشرافیہ کے حساب اور احتساب کا دن قریب آگیا ہے۔

پاکستان کو بچانے اور کرپشن کے خلاف عوام کو منظم کرنے کے لئے نکلا ہوں۔پاکستان کے اندر کرپشن میں ملوث مافیاز کو اڈیالہ جیل اور نیک اور ایماندار لوگوں کو ایوانوں کے اندر دیکھنا چاہتا ہوں۔جنہوں نے اس ملک کو لوٹا ہے میں ان کے ہاتھوں میں ہتھکڑیاں دیکھ رہا ہوں۔ انشاء اﷲ پاکستان کرپشن فری پاکستان بنے گا ۔انہوں نے کہا کہ پشاور سے ٹرین مارچ اسے لئے شروع کی ہے کہ حکمرانوں کو آگاہ کروں کہ اگر عدالت کے ذریعے احتساب نہ ہوا اور دودھ کا دودھ اور پانی کا پانی نہ ہوا تو پھر مظلوم اور مجبور عوام کے ہاتھ آپ کے گریبانوں پر ہوں گے۔

حکمران اس دن سے ڈریں جب غریب جھونپڑی سے نکلے گا، مزدور، کسان اور دہقان زمینوں اور گاؤں سے نکل کر اسلام آباد کی طرف مارچ کریں گے۔انہوں نے کہا کہ بلوچستان کے لوگوں کے مٹکے پانی سے خالی ہیں جبکہ بیوروکریٹس کے پانی کے ٹینک بھی پیسوں سے بھرے پڑے ہیں۔ ایسے نظام کو نہیں مانتا جس میں محنت غریب کسان کرے اور پھل امیر کو ملے۔انہوں نے کہا کہ پاکستان کے عوام پر گزشتہ 68سال سے مختلف مافیاز مسلط ہیں۔

ان مافیاز کو زنجیروں میں جھکڑنے کا وقت آگیا ہے۔الحمدﷲ پانامہ لیکس میں جماعت اسلامی کے کسی لیڈر کا نام نہیں آیا۔ جن لوگوں کے نام پانامہ لیکس میں آئے ہیں ان سے کہتا ہوں کہ اپنی مرضی اور شعورکے ساتھ سیاست اور سرکاری منصب چھوڑ

مکمل خبر پڑھنے کیلئے یہاں پر کلک کیجئے

25/05/2016 - 20:30:39 :وقت اشاعت