پانامہ لیکس کی تحقیقات کیلئے چیف جسٹس کی سربراہی میں عدالتی کمیشن قائم کیاجائے ..
بند کریں
تازہ ترین ایڈ یشن کے لیے ابھی کلک کریں
جمعہ اپریل

مزید اہم خبریں

وقت اشاعت: 15/04/2016 - 22:47:00 وقت اشاعت: 15/04/2016 - 22:45:27 وقت اشاعت: 15/04/2016 - 22:41:21 وقت اشاعت: 15/04/2016 - 22:41:21 وقت اشاعت: 15/04/2016 - 22:39:45 وقت اشاعت: 15/04/2016 - 22:38:04 وقت اشاعت: 15/04/2016 - 22:30:52 وقت اشاعت: 15/04/2016 - 22:30:32 وقت اشاعت: 15/04/2016 - 22:23:31 وقت اشاعت: 15/04/2016 - 22:21:13 وقت اشاعت: 15/04/2016 - 22:21:13
پچھلی خبریں - مزید خبریں

پشاور

پانامہ لیکس کی تحقیقات کیلئے چیف جسٹس کی سربراہی میں عدالتی کمیشن قائم کیاجائے ، سراج الحق

کرپشن سے پاک قیادت ہی قوم کے مسائل حل کر سکتی ہے، قومی خزانہ لوٹنے والوں کی ٹیکس چوری کی دولت واپس لائیں گے اور بیرون ملک اکاؤنٹس کا منہ قوم کی طرف کھلوائیں گے ، عوام سانپوں کو مزید دودھ پلا کر اژدھا بنانے کی بجائے کرپشن فری پاکستان کیلئے ہمارا ساتھ دیں ،شانگلہ میں جلسہ سے خطاب

پشاور(اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔15 اپریل۔2016ء)جماعت اسلامی پاکستان کے امیر سراج الحق نے پانامہ لیکس کی تحقیقات کیلئے چیف جسٹس آف پاکستان کی سربراہی میں تحقیقاتی عدالتی تحقیقاتی کمیشن بنانے کا مطالبہ کرتے ہوئے کہا ہے کہ کرپشن نے پورے نظام کو کھوکھلا کردیا ہے لیکن اس کاخاتمہ صرف وہ لوگ کر سکتے ہیں جو خود کرپشن سے پاک ہیں اور میں چیلنج سے کہتا ہوں کہ جماعت اسلامی کی قیادت کا دامن ہر طرح کی کرپشن سے پاک ہے ،ہم حکومتوں کا حصہ رہے ہیں ،اسمبلیوں اور سینٹ میں پہلے بھی رہے اور اب بھی موجود ہیں جماعت اسلامی کے کسی کونسلر،ناظم ،ایم پی اے، وزیر اور ایم این اے پر کرپشن کو کوئی الزام نہیں ۔

اس لیے اس کرپٹ نظام کو ہم ہی بدلیں گے وہ جمعہ کے روز آلوچ پورن ضلع شانگلہ میں کرپشن کے خلاف ایک بڑے جلسہ عام سے خطاب کر رہے تھے۔جلسہ سے صوبائی امیر مشتاق احمد خان،اور ضلعی امیر نجیب اللہ نے بھی خطاب کیا۔سراج الحق نے کہا کہ شانگلہ کے عوام اسلام سے محبت کرنے والے ہیں، سادہ پرامن اور خوشحال زندگی گزارنا چاہتے ہیں لیکن قومی خزانہ کو لوٹ لوٹ کر سرمایہ دار بننے والوں نے قوم سے خوشحالی چھین لی ہے۔

یہ چھوٹے چھوٹے سانپ تھے عوام نے دودھ پلا پلا کر ان کو اژدھے بنا لیئے ہیں اور اب یہ پوری قوم کو ہڑپنا چاہتے ہیں انھوں نے کہا کہ وقت کے ساتھ ان کی چوری کی مال و دولت سامنے آرہی ہے ۔کبھی پانامہ لیکس کی صورت میں اور کبھی بیرون ملک اکاؤنٹس کی صورت مین ان کی چوریاں منظر عام پر آ رہی ہیں۔انھوں نے کہا کہ آج پوری قوم لٹیروں سے حساب کتاب کا مطالبہ کر رہی ہے لیکن مطالبہ کس سے کیا جائے پورا نظام کرپٹ ہے یہ لوگ باریاں بدل بدل کر ایک دوسرے کو بچا رہے ہیں اور ایک دوسرے کے مددگار ہیں یہ لوگ چاہیں بھی تو کرپشن ختم نہیں کر سکتے جو خود سر تا پا کرپشن میں ڈوبے ہوئے ہوں وہ کرپشن کیسے ختم کرسکتے ہیں ان کو عام آدمی کی دکھ درد اور مسائل کا

اس خبر کی تفصیل پڑھنے کیلئے یہاں پر کلک کیجئے

15/04/2016 - 22:38:04 :وقت اشاعت