مشرف کو عدالتی فیصلوں کے علی الرغم باہر جانے دیا گیا تو اس کی ذمہ داری حکومت پر ..
بند کریں
تازہ ترین ایڈ یشن کے لیے ابھی کلک کریں
منگل اپریل

مزید اہم خبریں

وقت اشاعت: 22/04/2014 - 00:34:58 وقت اشاعت: 22/04/2014 - 00:34:58 وقت اشاعت: 22/04/2014 - 23:06:23 وقت اشاعت: 22/04/2014 - 23:06:23 وقت اشاعت: 22/04/2014 - 23:02:12 وقت اشاعت: 22/04/2014 - 23:02:12 وقت اشاعت: 22/04/2014 - 22:02:14 وقت اشاعت: 22/04/2014 - 22:02:14 وقت اشاعت: 22/04/2014 - 22:02:14 وقت اشاعت: 22/04/2014 - 21:36:50 وقت اشاعت: 22/04/2014 - 21:36:50
پچھلی خبریں - مزید خبریں

لاہور

مشرف کو عدالتی فیصلوں کے علی الرغم باہر جانے دیا گیا تو اس کی ذمہ داری حکومت پر ہوگی‘ سراج الحق ،امیر اور غریب کیلئے الگ الگ قانون نہیں ہونا چاہئے، لاقانونیت نے ملک کو اندھا کنواں بنا دیا ہے ،یہاں جس کی لاٹھی اس کی بھینس والا قانون ہے،طالبان کے ساتھ مذاکرات کو نتیجہ خیز بنایا جائے ،اس کی کامیابی سے ملک و ملت کا روشن مستقبل وابستہ ہے ‘ امیر جماعت اسلامی کا خطاب

لاہور (اُردو پوائنٹ اخبار تازہ ترین۔22اپریل۔2014ء)امیر جماعت اسلامی پاکستان سراج الحق نے کہا ہے کہ مشرف کو عدالتی فیصلوں کے علی الرغم باہر جانے دیا گیا تو اس کی ذمہ داری حکومت پر ہوگی ،امیر اور غریب کیلئے الگ الگ قانون نہیں ہونا چاہئے، لاقانونیت نے ملک کو اندھا کنواں بنا دیا ہے ،یہاں جس کی لاٹھی اس کی بھینس والا قانون ہے ،امیر کیلئے تمام قوانین موم کی ناک جبکہ غریب آدمی کی پوری عمر عدالتوں کے چکر لگاتے گزر جاتی ہے اور اسے انصاف نہیں ملتا،ہم ملک میں ایسا نظام چاہتے ہیں جو غریب اور مشرف جیسے اثر و رسوخ کے مالک کو ایک صف میں کھڑا کردے، قوم حامد میر پر قاتلانہ حملے کا جائزہ لینے کیلئے بنائے گئے عدالتی کمیشن کی جلد ازجلدرپورٹ کی منتظر ہے اور ہمیں امید ہے کہ یہ رپورٹ سالوں کی بجائے دنوں میں آئے گی، حکومت سے ایک بار پھر مطالبہ کیا ہے کہ طالبان کے ساتھ مذاکرات کو نتیجہ خیز بنایا جائے اور اس سلسلہ میں گومگو کی پالیسی چھوڑ کر دوٹوک اور واضح موقف اختیار کیا جائے ،کشتی کو بیچ منجدھار کے چھوڑ دینا دانش مندی نہیں ،مذاکرات کی کامیابی سے ملک و ملت کا روشن مستقبل وابستہ ہے ،اگر نواز شریف ملک میں دہشت گردی ،بدامنی اور انتشار کا خاتمہ چاہتے ہیں تو انہیں مذاکرات کی کشتی کو پار لگانے کیلئے حکمت اور تدبر کے ساتھ ساتھ جرأت کا مظاہرہ کرنا ہوگا،مذاکرات مخالف قوتیں ملک میں انتشار اور انارکی پھیلا کر جنوبی ایشیا میں بھارت کی بالادستی اور خطے میں امریکی مفادات کی تکمیل چاہتی ہیں، مذاکرات کیلئے محفوظ مقام صرف طالبان کی نہیں ،حکومت کی بھی ضرورت ہے ۔

ان خیالات کا اظہار انہوں نے مرکزی مجلس عاملہ کے خصوصی اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے کیا ۔ لیاقت بلوچ نے کہا کہ

اس خبر کی تفصیل پڑھنے کیلئے یہاں پر کلک کیجئے

22/04/2014 - 23:02:12 :وقت اشاعت