صحت کے شعبہ میں ترقیاتی سکیمیں شروع کرنے کیلئے 17 ارب روپے کی کثیر رقم مہیا کی گئی‘ ..
بند کریں
تازہ ترین ایڈ یشن کے لیے ابھی کلک کریں
اتوار اپریل

مزید قومی خبریں

وقت اشاعت: 13/04/2014 - 22:49:54 وقت اشاعت: 13/04/2014 - 21:26:33 وقت اشاعت: 13/04/2014 - 20:29:11 وقت اشاعت: 13/04/2014 - 20:14:52 وقت اشاعت: 13/04/2014 - 20:08:00 وقت اشاعت: 13/04/2014 - 20:08:00 وقت اشاعت: 13/04/2014 - 20:03:01 وقت اشاعت: 13/04/2014 - 20:03:01 وقت اشاعت: 13/04/2014 - 19:55:47 وقت اشاعت: 13/04/2014 - 17:11:14 وقت اشاعت: 13/04/2014 - 17:08:15
- مزید خبریں

لاہور

صحت کے شعبہ میں ترقیاتی سکیمیں شروع کرنے کیلئے 17 ارب روپے کی کثیر رقم مہیا کی گئی‘ وزیر خزانہ پنجاب،نوزائیدہ بچوں کوطبی سہولیات کی بلاتعطل فراہمی کے لیے 2۔ارب روپے مختص کئے ہیں‘مجتبیٰ شجاع الرحمن

لاہور(اُردو پوائنٹ اخبار تازہ ترین۔13اپریل۔2014ء) وزیر ایکسائز و ٹیکسیشن ، خزانہ پنجاب مجتبیٰ شجاع الرحمن نے کہا ہے کہ صحت مند زندگی گزارنے کے لئے رویوں میں تبدیلی لائی جائے کیونکہ صحت کے چیلنجوں سے نمٹنا وقت کی ضرورت ہے، بالخصوص ترقی پذیر ممالک میں ان امراض پر خصوصی توجہ دینے کی ضرورت ہے کیونکہ یہ مسائل ہماری معیشت پر بوجھ کا باعث بن رہے ہیں۔

انہوں نے کہا کہ صحت کے شعبہ میں ترقیاتی سکیمیں شروع کرنے کے لئے 17 ارب روپے کی کثیر رقم فراہم کی ہے تاکہ ایسے منصوبوں کے ذریعے عوام کو علاج ومعالجہ کی معیاری سہولیات فراہم کی جا سکیں اور صحت کے لیے 102ارب روپے فراہم کئے گئے ہیں۔مختلف وفود سے گفتگو کرتے ہوئے مجتبیٰ شجاع الرحمن نے کہا کہ پاکستان میں ہر 20 منٹ بعد ایک ماں دوران زچگی فوت ہو جاتی ہے اس طرح سال میں 15ہزار مائیں دوران زچگی زندگی ہار جاتی ہیں جبکہ دنیا میں 40 ہزار بچے پیدائش کے پہلے 30 دنوں میں فوت ہو جاتے ہیں جن میں سے 98 فیصد ترقی پذیر ممالک سے ہوتے ہیں۔

انہوں نے کہا کہ نوزائیدہ بچوں کوطبی سہولیات کی بلاتعطل فراہمی کے لیے 2۔ارب روپے مختص کئے ہیں۔ انہوں نے بتایا کہ امراض گردہ میں مبتلاغریب مریضوں کو مفت ڈائیلاسسز کے لئے 30 کروڑ روپے جاری کئے گئے ہیں جبکہ ضلعی وتحصیل سطح پر بلامعاوضہ ادویات کی فراہمی کے لئے 50 کروڑ روپے کی رقم مہیا کی گئی ہے۔ مجتبیٰ شجاع الرحمن نے کہا کہ کم وسائل رکھنے والے لوگوں کو صحت کی معیاری سہولیات کی فراہمی کے لئے 7ارب 50 کروڑ روپے مختص کئے گئے ہیں۔انہوں نے کہا کہ دنیا کی آبادی 2050 میں دگنی ہوجائے گی جبکہ پاکستان کی آبادی 2024میں دگنی ہوگی اور بڑھتی ہوئی آبادی کی پیش نظر عوام کو صحت ، تعلیم و دیگر سماجی سہولیات کی فراہمی کے لیے ایک جامع حکمت عملی کے تحت نئے منصوبے شروع کئے جارہے ہیں ۔

13/04/2014 - 21:26:33 :وقت اشاعت

:متعلقہ عنوان