زرداری امن پالیسی کی حمایت ،بلاول مخالفت ‘پیپلز پارٹی کی قیادت کنفیوژ ہے ،بتائیں ..
بند کریں
تازہ ترین ایڈ یشن کے لیے ابھی کلک کریں
اتوار اپریل

مزید اہم خبریں

وقت اشاعت: 06/04/2014 - 04:29:31 وقت اشاعت: 06/04/2014 - 23:18:29 وقت اشاعت: 06/04/2014 - 23:18:29 وقت اشاعت: 06/04/2014 - 22:39:32 وقت اشاعت: 06/04/2014 - 22:39:32 وقت اشاعت: 06/04/2014 - 22:39:32 وقت اشاعت: 06/04/2014 - 22:28:11 وقت اشاعت: 06/04/2014 - 22:28:11 وقت اشاعت: 06/04/2014 - 22:28:11 وقت اشاعت: 06/04/2014 - 21:47:07 وقت اشاعت: 06/04/2014 - 21:09:00
- مزید خبریں

لاہور

زرداری امن پالیسی کی حمایت ،بلاول مخالفت ‘پیپلز پارٹی کی قیادت کنفیوژ ہے ،بتائیں ابا کی بات مانیں یا صاحبزادے کی ‘ خواجہ سعد رفیق،بلاول بھٹو آستینیں چڑھا کر بڑھکیں لگاتے ہیں ،انکے دور میں ملک اور عوام کیلئے کیاکیا گیا؟ ، تین صوبوں کی عوام نے انہیں مسترد کر دیا ،امریکہ کی دنیاوی طاقت کم ہوئی ہے نہ ہماری غربت اور کمزوری ختم ہوئی ہے لیکن ہمارے دور میں ڈرون حملے رک گئے ، بند بھی ہونگے ،وفاقی وزیر ریلوے کاورکرزکنونشن سے خطاب

لاہور(اُردو پوائنٹ اخبار تازہ ترین۔6اپریل۔2014ء)وفاقی وزیر ریلوے خواجہ سعد رفیق نے کہا ہے کہ بلاول بھٹو آستینیں چڑھا کر بڑھکیں لگاتے ہیں لیکن وہ بتائیں انکے دور میں ملک اور عوام کے لئے کیا گیا ، تین صوبوں کی عوام نے انہیں مسترد کر دیا ہے اورپیپلز پارٹی اب وفاق کی جماعت نہیں رہی ،امریکہ کی دنیاوی طاقت کم ہوئی ہے اور نہ ہماری غربت اور کمزوری ختم ہوئی ہے لیکن مسلم لیگ (ن) کی حکومت کے دور میں ڈرون حملے رک گئے ہیں اس کا مطلب ہے کہ سابقہ حکومتوں کے دور میں ضرور کوئی گڑ بڑ تھی ، انشا اللہ ڈرون حملے بند بھی ہونگے ‘ موجودہ حکومت نے مسائل کے حل کیلئے الہ دین کا چراغ نہیں رگڑا بلکہ نیت سے کام کر کے دکھایا ہے جسکے نتائج سامنے آرہے ہیں ۔

ان خیالات کا اظہارا نہوں نے اتوار کے روز بھٹہ چوک بیدیاں روڈ پر ورکرز کنونشن سے خطاب کر تے ہوئے کیا ۔ خواجہ سعد رفیق نے شرکاء کو مخاطب کرتے ہوئے کہا کہ ڈرون حملے مشرف کے دور میں شروع ہوئے لیکن یہ نواز شریف کے دور میں رکے ہیں کہ نہیں ؟۔ آج بھی طاقت کا توازن نہیں بدلا ، امریکہ کی دنیا وی طاقت کم ہوئی ہے اور نہ ہی ہماری غربت اور کمزوری ختم ہوئی لیکن حملے رک گئے ہیں اور انشا اللہ یہ بند بھی ہو ں گے ۔

انہوں نے کہا کہ ہم ملک میں امن و امان کیلئے طالبان سے بات چیت کر رہے ہیں ۔ اس جنگ کی وجہ سے ہزاروں لوگ منوں مٹی تلے جا سوئے ہیں ۔ دونوں طرف سے پاکستانیوں کا خون بہا ۔ اس کو روکنے کیلئے مذاکرات فوج کا نہیں حکمرانوں کا کام تھا ،فوج کا کام تو دفاع کرنا ہے ۔ انہوں نے کہا کہ یہاں تو فوج کو بھی کام نہیں کرنے دیا گیا اور مشرف کے دور میں فوج کو سب سے زیادہ متنازعہ بنایا گیا ۔

انہوں نے کہا کہ بلاول بھٹو آستینیں چڑھا کر بڑھکیں مارتے ہیں لیکن وہ بتائیں انکے دور حکومت میں ملک اور عوام کے لئے کیا گیا ۔ آصف علی زرداری کہتے ہیں کہ ہم امن کی پالیسی کو سپورٹ کرتے ہیں جبکہ انکے صاحبزادے کہتے ہیں کہ ہم اس پالیسی کو سپورٹ نہیں کرتے ۔اب بتایا جائے ابا کی بات مانیں یا ان کے صاحبزادے کی ۔ قومی اسمبلی میں اپوزیشن لیڈر ایک بات کرتے ہیں اور دوسرے دن دوسری بات سامنے آ جاتے ہیں ،پیپلز پارٹی والے خود کنفیوژ ہیں ۔

انکے قیادت میں سے ایک کا منہ شمال اور دوسرے کا جنوب کی طرف سے ۔ انہوں نے کہا کہ موہنجو داڑو تاریخی بہت قدیم ہے اور یہ ایک قدیم ورثہ ہے اس ورثے کے لئے تو ایک کروڑ روپے رکھے گئے جبکہ ”تھرکنے “کے لئے فیسٹول کے انعقاد پر اربوں روپے خرچ کر دئیے گئے ۔ پیپلز پارٹی سندھ میں مسلسل حکمرانی کرتی آرہی ہے لیکن موہنجو داڑوں کو بچانے کے لئے کچھ نہیں کیاگیا ۔

انہوں نے کہا

اس خبر کی تفصیل پڑھنے کیلئے یہاں پر کلک کیجئے

06/04/2014 - 22:39:32 :وقت اشاعت