پاکستان بھارت کو فوری طور پر پسندیدہ ملک کا درجہ دے، بھارتی ہائی کمشنر
بند کریں
تازہ ترین ایڈ یشن کے لیے ابھی کلک کریں
بدھ مارچ

لاہور

پاکستان بھارت کو فوری طور پر پسندیدہ ملک کا درجہ دے، بھارتی ہائی کمشنر

span class=\"location\">لاہور(اُردو پوائنٹ تازہ ترین اخبار۔ 19مارچ 2014ء)
پاکستان میں متعین بھارتی ہائی کمشنر ٹی سی اے راگھون نے کہا ہے پاکستان فوری طور پر بھارت کو پسندیدہ ملک کا درجہ دے، پانی کا مسئلہ ایسا نہیں جو آج ہی حل ہو جائے۔دونوں ملکوں کے واٹر کمیشن سال میں 3 یا 4 مرتبہ ملاقات کرتے ہیں اس مرتبہ واٹر کمیشن کی ملاقات دہلی میں ہوگی جس میں پانی کا مسئلہ زیر بحث آئے گا لیکن تعلقات میں بہتری آنے سے وقت کے ساتھ ساتھ دونوں ملکوں کے درمیان پانی کا مسئلہ بھی حل ہو جائیگا۔

یہ بات انہوں نے وفاق ایوان ہائے صنعت و تجارت لاہور کے زونل دفتر میں صنعت کاروں اور تاجروں کے اجلاس سے خطاب اور صحافیوں سے گفتگو کرتے ہوئے کہی، اجلاس کی صدارت ایف پی سی سی آئی کے نائب صدر اور زونل چیئرمین ایس ایم نصیر نے کی۔ بھارتی ہائی کمشنر نے ایک سوال کے جواب میں کہا کہ بھارت پاکستان کو 500میگاواٹ بجلی کی فراہمی کیلیے تیار ہے، دونوں ملکوں کی ٹیکنیکل ٹیمیں جلد رپورٹ پیش کریں گی جس کی روشنی میں پاکستان کو بجلی سپلائی کی جائے گی، جہاں تک بھارت میں ہونیوالے آئی پی ایل میں پاکستانی کھلاڑیوں کی شمولیت کی بات ہے تو یہ دونوں ملکوں کے کرکٹ بورڈ کا مسئلہ ہے جو وقت کے ساتھ ساتھ حل کرلیں گے، بنگلہ دیش میں ایشیا کپ میں ساری دنیا نے پاک بھارت میچ دیکھا اور اب ٹی ٹونٹی ورلڈکپ میں پھر لوگ پاک بھارت میچ سے لطف اندوز ہوں گے۔

انہوں نے کہا کہ جس طرح پاکستان میں بھارتی فنکاروں کی پذیرائی کی جاتی ہے اسی طرح بھارت میں بھی پاکستانی فنکاروں کو بھرپور عزت دی جاتی ہے جس کی واضح مثال پاکستانی گلوکار اور اداکار علی ظفر کی ہے۔ قبل ازیں بھارتی ہائی کمیشن نے صنعت کاروں اور تاجروں کے اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ پاکستان اور بھارت کے درمیان باہمی تجارت کو فروغ دینا وقت کی ضرورت ہے، دونوں ملک تجارت بڑھانے کیلیے سنجیدہ ہیں، دونوں ملکوں کے تعلقات میں بہتری آئی ہے اور جب آزادانہ تجارت شروع ہو جائے گی تو تعلقات مزید بہتر ہو جائیں گے۔

انہوں نے کہا کہ پہلے کی نسبت پاکستانی کاروباری افراد کو بھارت کے ویزوں میں آسانی فراہم کی گئی ہے، تجارت بڑھانے کیلیے دونوں ملکوں میں نمائشوں کا انعقاد

اس خبر کی تفصیل پڑھنے کیلئے یہاں پر کلک کیجئے

19/03/2014 - 15:27:09 :وقت اشاعت

:متعلقہ عنوان