مذاکرات کی میز کومکمل طور پر بیوروکریٹس کے حوالے کرنے کے بجائے وزیر اعظم سیاسی ..
بند کریں
تازہ ترین ایڈ یشن کے لیے ابھی کلک کریں
منگل مارچ

مزید اہم خبریں

وقت اشاعت: 11/03/2014 - 20:19:05 وقت اشاعت: 11/03/2014 - 20:19:05 وقت اشاعت: 11/03/2014 - 20:17:24 وقت اشاعت: 11/03/2014 - 20:17:24 وقت اشاعت: 11/03/2014 - 19:59:05 وقت اشاعت: 11/03/2014 - 19:59:05 وقت اشاعت: 11/03/2014 - 19:57:33 وقت اشاعت: 11/03/2014 - 19:57:33 وقت اشاعت: 11/03/2014 - 19:57:33 وقت اشاعت: 11/03/2014 - 19:56:36 وقت اشاعت: 11/03/2014 - 19:50:34
پچھلی خبریں - مزید خبریں

لاہور

مذاکرات کی میز کومکمل طور پر بیوروکریٹس کے حوالے کرنے کے بجائے وزیر اعظم سیاسی شخصیات کو لے کر مذاکرتی ٹیم کی قیادت خود کریں ‘ سید منور حسن ،جنگ بندی کے 11دن گزر جانے کے بعد بھی حکومت کی طرف سے کمیٹی تشکیل نہ دیئے جانے اور تاخیری رویوں سے شکوک و شبہات جنم لے رہے ،حکومت غیر سنجیدہ رویہ ترک کرکے خود مذاکرات کی میز پر بیٹھے اورمذاکرات کو تعطل اور طوالت کا شکار نہ کرے‘ امیر جماعت اسلامی کا انٹرویو

لاہور (اُردو پوائنٹ اخبار تازہ ترین۔11مارچ۔2014ء) امیر جماعت اسلامی پاکستان سید منورحسن نے کہا ہے کہ طالبان کی طرف سے جنگ بندی میں توسیع خوش آئند جبکہ حکومت کی طرف سے مذاکرات میں بیوروکریٹس کوشامل کرنے کے فیصلے سے عوام کے اندر کنفیوزن اور غیر یقینی صورتحال نے جنم لیا ہے ،مذاکرات کی میز کومکمل طور پر بیوروکریٹس کے حوالے کرنے کے بجائے وزیر اعظم اپنے ہمراہ سیاسی شخصیات کو لے کر مذاکرتی ٹیم کی قیادت خود کریں ،حکومت نے سنجیدہ رویہ نہ اپنایا تومذاکرات کی بیل منڈھے نہیں چڑھے گی اور ملک و قوم بدامنی کی نہ ختم ہونے والی دلدل میں پھنس جائیں گے ،ملٹری آپریشن کا مطالبہ کرنے والے بدامنی پر قابو پانے کیلئے نہیں بلکہ ملک کی اینٹ سے اینٹ بجانے کیلئے کوشاں ہیں،جنگ بندی کے 11دن گزر جانے کے بعد بھی حکومت کی طرف سے کمیٹی تشکیل نہ دیئے جانے اور تاخیری رویوں سے شکوک و شبہات جنم لے رہے اور چہ مگوئیاں شروع ہوگئی ہیں ،وزیر اعظم اور وزیر داخلہ کو ان تمام پہلوؤں پر بھی توجہ دینی چاہئے،اے پی سی میں اتفاق رائے کے بعد کئی ماہ تذبذب میں گزارنے کی وجہ سے ہی پارٹیوں میں مذاکرات پر اختلافات نے جنم لیا ہے جو نیک شگون نہیں ،مسئلہ کشمیر کشمیر ی عوام کی قربانیوں کی بدولت زندہ ہے،مشرف اور ان کے بعد آنے والی حکومتوں نے اس کو دفناکر مٹی ڈالنے میں کوئی کسر نہیں چھوڑی ، جو حکمران دشمن کی شان میں قصیدے پڑھیں اور خیر خواہوں کی بات پر کان نہ دھریں ان کو گڑھے میں گرنے سے کوئی نہیں بچا سکتا ،نواز شریف جتنا بڑا مینڈیٹ بھی لے آئیں اور بھارت کی ہاں میں ہاں ملاتے رہیں، پاکستانی عوام کا کشمیر پر وہی موقف رہے گا جو سید علی گیلانی کا ہے ۔

ایک میگزین کو انٹرویو دیتے

اس خبر کی تفصیل پڑھنے کیلئے یہاں پر کلک کیجئے

11/03/2014 - 19:59:05 :وقت اشاعت