جسٹس (ر)رانا بھگوان داس کی آخری رسومات کراچی میں ادا کردی گئیں،پرانا گولیمار میں ..
بند کریں
تازہ ترین ایڈ یشن کے لیے ابھی کلک کریں
پیر فروری

مزید اہم خبریں

وقت اشاعت: 23/02/2015 - 00:12:11 وقت اشاعت: 23/02/2015 - 23:31:26 وقت اشاعت: 23/02/2015 - 23:31:26 وقت اشاعت: 23/02/2015 - 23:31:26 وقت اشاعت: 23/02/2015 - 23:30:18 وقت اشاعت: 23/02/2015 - 23:30:18 وقت اشاعت: 23/02/2015 - 23:28:25 وقت اشاعت: 23/02/2015 - 23:28:25 وقت اشاعت: 23/02/2015 - 23:28:25 وقت اشاعت: 23/02/2015 - 23:27:33 وقت اشاعت: 23/02/2015 - 23:27:33
- مزید خبریں

کراچی

جسٹس (ر)رانا بھگوان داس کی آخری رسومات کراچی میں ادا کردی گئیں،پرانا گولیمار میں واقع شمشان گھاٹ میں ان کی چتا جلائی گئی،

چتا کو آگ بیٹے کیلاش کمار، رانا مکیش کمار، بھائی رانا اشوک سمیت دیگر قریبی رشتہ داروں نے لگائی، دو بیٹے، ایک بیٹی اور اہلیہ سوگواران میں شامل، , پاکستان اور اقلیتی برادری ایک ایماندار شخص سے محروم ہوگئی، والد کی ارتھیاں ا وصیت کے مطابق بھارت میں جا کر دریائے گنگا میں بہاؤں گا ، بیٹا ، , رانا بھگوان داس کو چیف الیکشن کمشنر نامزد کرنے کیلئے تمام سیاسی جماعتوں کا متفق ہونا ایمانداری کی عکاسی کرتا ہے، رکن قومی اسمبلی رمیش کمار

کراچی (اردو پوائنٹ تازہ ترین اخبار 23 فروری 2015ء) سپریم کورٹ کے سابق قائم مقام چیف جسٹس رانا بھگوان داس کی آخری رسومات پیر کی شام پرانا گولیمار میں واقع شمشان گھاٹ میں ادا کی گئی۔ ان کی آخری رسومات میں کسی حکومتی، سیاسی اور وکلاء تنظیم کے نمائندے نے شرکت نہیں کی تاہم چند ریٹائرڈ ججز نے آنجہانی جسٹس کے گھر جاکر تعزیت کی ۔ان میں وفاقی شریعت کورٹ کے سابق ججز آغا رفیق، سابق چیف جسٹس (ر)ناصر اسلم زاہد اور دیگر شامل تھے۔

ان کی ارتھی کو پیر کی سہ پہر کراچی کے معروف قبرستان میوہ شاہ سے متصل شمشان گھاٹ لایا گیا جو کہ کراچی کے خطرناک علاقے لیاری میں واقع ہے پولیس اور قانون نافذ کرنے والے اداروں کے اہلکاروں نے اس موقع پر حفاظتی انتظامات کر رکھے تھے ان کی چتاکو ان کے بڑے بیٹے رانا کلاش چند نے آگ دی انتم سنسکار کی رسم میں آنجہانی جج کے عزیزو اقارب اور دوستوں نے شرکت کی بھگوان داس 73 برس کی عمر میں پیر کی صبح انتقال کر گئے تھے۔

وہ دل کے عارضے میں مبتلا تھے اور نجی ہسپتال میں زیرعلاج تھے۔ رانا بھگوان داس نے سوگواران میں دو بیٹے اور ایک بیٹی اور اہلیہ کو چھوڑا ہے ۔ اس موقع پر میڈیا سے بات چیت کرتے ہوئے رانا بھگوان داس کے بڑے بیٹے کیلاش کمار نے کہا کہ ان کے والد ایک ایماندار شخص اور پاکستان سے مخلص تھے۔ آج پاکستان اور اقلیتی برادری ایک ایماندار شخص سے محروم ہوگئی ہے۔

انہوں نے بتایا کہ میں اپنے والد کی ارتھیاں ان کی وصیت کے مطابق بھارت میں جا کر دریائے گنگا میں بہاؤں گا۔ اس موقع پر آل پاکستان ہندو کونسل کے صدر اور مسلم لیگ(ن) کے رکن قومی اسمبلی رمیش کمار نے جسٹس(ر)رانا بھگوان داس کو خراج تحسین پیش کرتے ہوئے کہا کہ رانا بھگوان داس نے ہمیشہ اقلیتوں کو پاکستان کی خدمات کا سبق دیااور ہمیشہ ضمیر کی بات سننے کا درس دیا۔

رانا بھگوان داس جیسی ایماندارشخصیت پوری قوم کیلئے بجا طور پررول ماڈل کا درجہ رکھتی ہے۔ انہوں نے مرحوم رانا بھگوان داس کے ساتھ گزارے ہوئے لمحات کا تذکرہ کرتے ہوئے کہا کہ رانا صاحب نے ہمیشہ ملک و قوم کی بہتری میں اپنا بھرپور کردار ادا کیا۔انہوں نے کہا کہ رانا بھگوان داس کو چیف الیکشن کمشنر نامزد کرنے کیلئے تمام سیاسی جماعتوں کا متفق ہونا انکی ایمانداری کی عکاسی کرتا ہے۔

ڈاکٹر رمیش کمارکے بقول رانا بھگوان داس نے معذرت کی وجہ اصولوں پر سمجھوتہ نہ کرنا بتائی تھی۔ انہوں نے کہا کہ پاکستان ہندو کونسل نے بھی مطالبہ کیا تھا کہ لیاقت نہرو سمجھوتے کے تحت رانا بھگوان داس کو متروکہ وقف املاک بورڈ کا سربراہ مقرر کیا جائے۔ ڈاکٹر رمیش کمار نے ایک سوال کے جواب میں کہا کہ مرحوم رانا بھگوان داس کا ماننا تھا کہ انسان کے کام اسکے کیے گئے اچھے کام ہی آتے ہیں اور وہی ہوتا ہے جو مالک کی مرضی ہوتی ہے۔

اس موقع پر ڈاکٹر رمیش کمار نے اس عزم کا اعادہ کیا کہ وہ ملک و قوم کی خدمت کیلئے رانا بھگوان داس کے مشن کو جاری رکھیں گے۔واضح رہے کہ رانا بھگوان داس پاکستان کے نہایت قابل احترام ججز میں سے ایک تھے۔ سابق صدرجنرل ریٹائرڈ پرویز مشرف کے دورِ حکومت میں پیدا ہونے

اس خبر کی تفصیل پڑھنے کیلئے یہاں پر کلک کیجئے

23/02/2015 - 23:30:18 :وقت اشاعت